نیٹو: اگر روس یوکرین پر غالب آ گیا تو باری ہمسایہ ممالک کی آ سکتی ہے

اگر دنیا نے روس کو فوجی طاقت سے اپنے مقاصد میں کامیاب ہوتا دیکھ لیا تو ایسی دنیا ہمارے لئے زیادہ خطرناک دنیا ہو گی: اسٹالٹن برگ

1863735
نیٹو: اگر روس یوکرین پر غالب آ گیا تو باری ہمسایہ ممالک کی آ سکتی ہے

نیٹو کے سیکرٹری جنرل ژینز اسٹالٹن برگ نے کہا ہے کہ اگر روس یوکرین پر غالب آ گیا تو ہمسایہ ممالک پر حملے کر سکتا ہے۔

اسٹالٹن برگ نے ناروے میں لیبر پارٹی کی طرف سے جزیرہ اوٹویا میں منعقدہ موسمِ گرما کیمپ میں شرکت کی اور یہاں خطاب میں 24 فروری سے یوکرین پر جاری روسی حملوں پر بات کی ہے۔

اسٹالٹن برگ نے کہا ہے کہ یوکرین کی حمایت کرنا نیٹو کی اخلاقی ذمہ داری ہے۔ روس کے صدر ولادی میر پوتن کی، یوکرین سے لگائی ہوئی امیدوں میں، ناکامی  ہمارے مفاد میں ہے۔ اگر دنیا نے روس کو فوجی طاقت سے اپنے مقاصد میں کامیاب ہوتا دیکھ لیا تو ایسی دنیا ہمارے لئے زیادہ خطرناک دنیا ہو گی۔ اگر روس جنگ جیت گیا تو یہ بات ثابت ہو جائے گی کہ پوتن  کی زور زبردستی  مفید تھی  اور اس کے بعد باری روس کے دوسرے ہمسایہ ممالک کی آ  سکتی ہے"۔

 روس  کی پیش قدمی کو روکنے اور یوکرین کے بعض علاقوں کی واپسی کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہے کہ امن و امان کے تحفظ کے لئے نیٹو نے مشرق میں اپنی موجودگی میں بھی اضافہ کیا ہے۔

ژینز اسٹالٹن برگ نے کہا ہے کہ "روس کے حملوں کے بعد نیٹو اتحاد زیادہ متحد شکل میں حرکت کر رہا ہے ۔  فن لینڈ اور سویڈن کی رکنیت  کی تیاریاں اس کا ثبوت ہیں۔ امریکی سینٹ نے ان ممالک کے شرکت پروٹوکولوں کی منظوری دے دی ہے۔ اس منظوری سے فن لینڈ  اور سویڈن کی نیٹو رکنیت کو منظور کرنے والے اتحادی ممالک کی تعداد 23 ہو گئی ہے۔ بہت سے ممالک قومی سطح پر منظوری کے عمل کو مکمل کرنے والے ہیں۔ اس طرح یہ رکنیت نیٹو کی جدید  تاریخ کی سریع ترین رکنیت بن گئی ہے"۔


ٹیگز: #روس , #نیٹو

متعللقہ خبریں