بوچما میں روسی فوجیوں کا ظلم و ستم نظر آنے والے برفانی گلیشیر کی مانند ہے : یوکرینی وزیر خارجہ

پولینڈ کے دارالحکومت وارسا میں ہونے والی ملاقات کے بعد برطانوی وزیر خارجہ لز ٹرس اور دیمترو کولیبا نے یوکرین کی تازہ ترین صورتحال پر مشترکہ پریس کانفرنس  سے خطاب کیا

1807336
بوچما میں روسی فوجیوں کا ظلم و ستم  نظر آنے والے برفانی گلیشیر کی مانند  ہے : یوکرینی وزیر خارجہ

یوکرین کے وزیر خارجہ دیمترو کولیبا نے کہا کہ دارالحکومت کیف کے قریب بوچا میں ہونے والی ہولناکیاں، جسے یوکرین کی فوج نے روسی فوجی دستوں سے آزاد کرایا  گیا ہے  نظر  آنے والی   "برف کے گلیشیر کی مانند ہے جب کہ ماریوپول میں صورت حال "بہت خراب"  ہو چکی ہے۔

پولینڈ کے دارالحکومت وارسا میں ہونے والی ملاقات کے بعد برطانوی وزیر خارجہ لز ٹرس اور دیمترو کولیبا نے یوکرین کی تازہ ترین صورتحال پر مشترکہ پریس کانفرنس  سے خطاب کیا۔

یوکرین کے وزیر نے کہا کہ اگرچہ ان کے ملک نے دارالحکومت کیف میں فتح حاصل کی ہے لیکن جنگ اب بھی جاری ہے اور روس مشرقی یوکرین میں ایک نئے اور بڑے پیمانے پر حملے کی تیاری کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ روس ڈونیٹسک اور لوہانسک کے مزید علاقوں پر قبضہ کرنے کی کوشش کرے گا، کولیبا نے  نے مزید کہا کہ "وہ خون ریز  علاقے  ماریوپول پر قبضہ کرنے کی کوشش کریں گے۔ بوچا میں جو مظالم ہم نے دیکھے ہیں وہ  صرف نظر آنے والی  برفانی گلیشیر  کی مانند ہیں جبکہ ابھی بہت کچھ  سامنے آنے والا ہے۔  انہوں نے کہا کہ  روسی فوج نے اب تک یوکرین کی سرزمین پر  جو ظلم و ستم کیے ہیں  اس کے بارے میں   بلا  مبالغہ انتہائی دکھ کے ساتھ  کہہ سکتا ہوں   کہ ماریوپول میں صورتحال بوچا اور کیف کے قریب واقع  دوسرے شہروں اور قصبوں میں ہے وہ انتہائی خراب ہے  ۔ بوچا، ماریوپول اور دیگر مقامات پر   ہونے والے ظلم و ستم اور  ہولناکیوں  کی وجہ سے  G7 اور یورپی  یونین کو سنگین پابندیاں لگانے کی ضرورت ہے۔

یاد رہے روسی فوجیوں نے 24 فروری کو یوکرین پر حملہ کیا تھا۔



متعللقہ خبریں