بریگزٹ کی تاریخ 31 اکتوبر تک بڑھا دی گئی ہے:ٹسک

برطانیہ کی وزیراعظم تھریسا مے کا کہنا ہے کہ اگرچہ بریگزٹ کو 31 اکتوبر تک ملتوی کر دیا گیا ہے تاہم ،اس کے باوجود برطانیہ اب بھی 22 مئی کو یورپی یونین سے نکل  سکتا ہے

donald tusk.jpg
juncker-tusk.jpg

برطانیہ کی وزیراعظم تھریسا مے کا کہنا ہے کہ اگرچہ بریگزٹ کو 31 اکتوبر تک ملتوی کر دیا گیا ہے تاہم ،اس کے باوجود برطانیہ اب بھی 22 مئی کو یورپی یونین سے نکل  سکتا ہے۔

گزشتہ  شب برسلز میں منعقد ایک پریس کانفرنس میں انہوں نے مزید کہا کہ اگر ہم کسی معاہدے تک پہنچ گئے تو اب بھی ہمارے 22 مئی تک نکل جانے کا امکان ہے۔

یورپی کونسل کے سربراہ ڈونلڈ ٹسک یہ اعلان کر چکے ہیں کہ برطانوی وزیراعظم تھریسا مے بریگزٹ کو 6 ماہ ملتوی کرنے کے حوالے سے یورپی یونین کی پیشکش پر   آمادہ ہو گئی ہیں۔

 ٹسک نے اپنی ٹویٹ میں لکھا ہے کہ برسلز سربراہی  اجلاس کے اختتام پر یورپی یونین کے 27 ممالک اور برطانیہ 31 اکتوبر تک کی لچک دار توسیع پر آمادہ ہو گئے ، اس طرح برطانیہ کے پاس بہتر ممکنہ حل تلاش کرنے کے لیے مزید چھ ماہ ہیں۔

فرانسیسی صدر امانویل ماکروں کے مطابق بریگزٹ کے حوالے سے یورپی یونین میں مختلف نقطہ نظر ہیں مگر اس کے باوجود اتفاق رائے ہو گیا ہے ۔

 انہوں نے بتایا کہ برطانوی وزیراعظم  مے کی جانب سے پیش کی جانے والی ضمانتوں نے اتفاق رائے تک پہنچنے کے حوالے سے حوصلہ افزائی کی۔

یورپی یونین کے ذرائع کا کہنا ہے کہ  طویل اور تھکا دینے والے مذاکرات کے بعد اس تجویز پر اتفاق رائے سامنے آیا ہے ۔

 

 



متعللقہ خبریں