فرانس: احتجاجی مظاہرے، صدر ماکرون اور ان کی حکومتی پالیسیوں کے خلاف احتجاج

مظاہرین نے تنخواہوں اور اقتصادی شرائط میں بہتری لانے، ٹیکسوں میں کمی کرنے، مظاہرے کا حق دینے اور غیر ملکی طالبعلموں کے تعلیمی مصارف میں کئے گئے اضافے کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا

1139564
فرانس: احتجاجی مظاہرے، صدر ماکرون اور ان کی حکومتی پالیسیوں کے خلاف احتجاج

فرانس میں ملک کی بڑی لیبر یونینوں میں سے جنرل کنفیڈریشن آف لیبرCGT اور ییلو جیکٹ مظاہرین نے دارالحکومت پیرس سمیت ملک بھر میں احتجاجی مظاہرے کئے جن میں صدر امانوئیل ماکرون اور ان کی حکومت کی پالیسیوں کے خلاف احتجاج کیا گیا۔

مظاہرین نے تنخواہوں اور اقتصادی شرائط میں بہتری لانے، ٹیکسوں میں کمی کرنے، مظاہرے کا حق دینے اور غیر ملکی طالبعلموں کے تعلیمی مصارف میں کئے گئے اضافے کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا۔

پیرس میں مظاہرین بلدیہ کی عمارت کے سامنے جمع ہوئے اور' کونکورڈ 'اسکوائر تک مارچ کی۔

مارچ کے دوران کسی کشیدگی کا سامنا نہیں ہوا لیکن جیسے ہی مظاہرین 'کونکورڈ' اسکوائر پہنچے پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں شروع ہو گئیں۔ مظاہرین نے پولیس پر پتھراو کیا اور جواب میں پولیس نے آنسو گیس کا استعمال کیا۔

پولیس کے فراہم کردہ اعداد و شمار کے مطابق  پیرس کے مظاہرے میں 18 ہزار مظاہرین نے شرکت کی تاہم مظاہرے کے منتظمین کے مطابق یہ تعداد 30 ہزار تک تھی۔

مارسیلیا، لیون، ٹولوس، سٹراس برگ، کان، لی ہیور اور رواین میں کئے گئے مظاہروں میں بھی مظاہرین کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔

ان کے علاوہ دیگر کئی شہروں میں ییلو جیکٹ مظاہرین نے راستے بلاک کر کے مظاہرے کئے جن کی وجہ سے ٹریفک جام کے مسائل کا سامنا ہوا۔

نانٹس میں مظاہرین نے ائیرپورٹ کی طرف جانے والے راستے بند کر دئیےجس کے نتیجے میں مسافروں کو ٹرمینل تک پہنچنے کے لئے 3 کلو میٹر کا راستہ پیدل طے کرنا پڑا۔



متعللقہ خبریں