یورپی پارلیمنٹ: رکن ممالک برآمد کئے جانے والے اسلحے کے کنٹرول میں ناکام رہے ہیں

یمن میں بحری  گھیراو یورپی یونین کے فروخت کردہ جنگی بحری جہازوں کی مدد سے کیا گیا ہے اور یمن کے عوام پر جو بمباری کی جا رہی ہے وہ بھی یورپی یونین کے ممالک  کی طرف سے فروخت کئے گئے طیاروں اور بموں  کے ساتھ کی جا رہی ہے: یورپی پارلیمنٹ

1088189
یورپی پارلیمنٹ: رکن ممالک برآمد کئے جانے والے اسلحے کے کنٹرول میں ناکام رہے ہیں

یورپی پارلیمنٹ  نے اپنے رکن ممالک میں سے سعودی عرب سمیت مشرق وسطیٰ کے جھڑپوں کی زد میں آئے ہوئے علاقوں  کے لئے اسلحے کی پابندی اور اسلحے کی فروخت کے معاملات میں سخت کنٹرول  کی اپیل کی ہے۔

فرانس کے شہر سٹراس برگ میں جاری یورپی یونین کے جنرل کمیٹی  اجلاس  میں یورپین یونائیٹڈ لیفٹ  گروپ GUE/NGL کی جرمن رکن سبین لوسنگ  کی تیار کردہ رپورٹ اور موضوع سے متعلق ایک خاکہ بل بحث کے بعد منظور کر لیا گیا ہے۔

150 منفی ووٹوں کے مقابلے میں 427 مثبت ووٹوں کے ساتھ منظور کئے جانے والے اس فیصلے میں کہا گیا ہے کہ رکن ممالک برآمد کئے جانے والے اسلحے کے کنٹرول میں ناکام رہے ہیں لہٰذا اسلحے کی برآمد میں زیادہ شفافیت کی اور اصولوں کی خلاف ورزی کی صورت میں پابندیوں کا میکانزم فعال کرنے کی ضرورت  ہے۔

فیصلے میں یورپی یونین ممالک سے  برآمد کئے گئے اسلحے کے یمن  کی جھڑپوں میں شدت پیدا کرنے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے سعودی زیرِ قیادت  کولیشن  پر پابندیوں کے اطلاق کی اپیل کی گئی ہے۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ یورپی یونین ممالک نے اسلحے کی فروخت کے اصولوں کی باضابطہ خلاف ورزی کی ہے لہٰذا ایک ایسے میکانزم کی سخت ضرورت ہے کہ جو یورپی یونین کے رکن ممالک  کی اسلحے کی فروخت  کے لئے طے شدہ اصول و ضوابط  کے اطلاق کو یقینی بنائے۔

مزید کہا گیا ہے کہ یمن میں بحری  گھیراو یورپی یونین کے فروخت کردہ جنگی بحری جہازوں کی مدد سے کیا گیا ہے اور یمن کے عوام پر جو بمباری کی جا رہی ہے وہ بھی یورپی یونین کے ممالک  کی طرف سے فروخت کئے گئے طیاروں اور بموں  کے ساتھ کی جا رہی ہے۔

فیصلے میں ،یورپی یونین کے رکن ممالک جرمنی اور ہالینڈ کی طرف سے سعودی عرب کے لئے اسلحے کی پابندی  کے فیصلے  پر ممنونیت کا اظہار کیا گیا ہے اور تمام رکن ممالک سے اس پابندی کے اطلاق کی اپیل کی گئی ہے۔

واضح رہے کہ امریکہ کے بعد یورپی یونین اسلحے کی فروخت میں دوسرے نمبر پر ہے۔

امریکہ دنیا میں اسلحے کی فروخت کا 27 فیصد پیدا اور فروخت کرتا ہے اور اس فروخت کا 40.5 فیصد مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ کے ہاتھ فروخت کیا جاتا ہے۔



متعللقہ خبریں