اسرائیل کے قومی مملکت قانون پر برطانیہ کی تشویش

8 ملین سے زائد نفوس کے حامل ملک کی 20  فیصد سے زائد آبادی  پر مبنی عرب شہری دوسرے درجے کے شہری بن جائینگے

1017826
اسرائیل کے قومی مملکت قانون پر برطانیہ کی تشویش

برطانیہ  نے اطلاع دی ہے کہ اسرائیلی  پارلیمان کی جانب سے"یہودی قومی مملکت" قانون نے ان کو  خدشات دلائے ہیں۔

برطانوی دفترِ خارجہ نے اس موضوع کے حوالے سے اپنے اعلان میں کہا ہے کہ "اسرائیل  کی جانب سے  اپنے تمام تر شہریوں کے حوالے سے طویل مدت سے مساوات کے معاملے میں ضمانت  ڈیموکریسی کے طاقتور ترین پہلوؤ ں میں سے ایک ہے۔

گزشتہ ہفتے اسرائیل  پارلیمنٹ میں  بہت ہی کم ووٹوں کے ساتھ منظور کردہ قانون دو مختلف   شہریوں  کے ماڈل پر مبنی ہے۔ جس کے مطابق 8 ملین سے زائد نفوس کے حامل ملک کی 20  فیصد سے زائد آبادی  پر مبنی عرب شہری دوسرے درجے کے شہری بن جائینگے۔

اس قانون کے ذریعے عربی زبان  کو اب سرکاری درجہ حاصل نہیں ہو گا اور ملک کی واحد سرکاری زبان ابرانی  ہو گی۔قانون میں اسرائیل کی دنیا کے تمام تر صیہونی باشندوں کے   مادر ِ وطن   کے طور پر تشریح کی گئی ہے۔  جو کہ اس سرزمین پر عربوں کے وجود اور ماضی کی نفی کرتا ہے۔

 



متعللقہ خبریں