ترکی مظلومین اور متاثرین کی صدا بنتے ہوئے اپنی جدوجہد کو جاری رکھے گا، صدر ایردوان

مسلم امہ کو بولنے کا حق حاصل نہیں،  افریقہ، لاطینی امریکہ اور جنوبی ایشیا کے مطالبات پر کان نہیں دھرے گئے

1721866
ترکی مظلومین اور متاثرین کی صدا بنتے ہوئے اپنی جدوجہد کو جاری رکھے گا، صدر ایردوان

صدر رجب طیب ایردوان  کا کہنا  ہے کہ ہم تمام تر مظلومین اور متاثرین  کے نام پر اپنی جدوجہد کو مزید  آگے بڑھانے پر پُرعزم ہیں۔

ٹی آرٹی ورلڈ فورم 2021 کو ویڈیو پیغام بھیجنے والے  صدر نے  انسانیت کے نام پر کچھ مدت سے اقتصادی، سیاسی، انسانی  سطح پر صحت کے بحران کے خلاف نبرد آزما ہونے کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ اس سلسلے  میں  رونما ہونےو الی پیش رفت نے اب  کرہ ارض میں کسی بھی چیز کے ماضی کی طرح  نہ ہونے کا مظاہرہ کیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ تمام تر بنی نو انسانوں کے لیے  خطرہ تشکیل دینے والے اس بحران کے سامنے  دنیا میں امن و انصاف قائم کرنے   پر مامور ادارے  ایک بار امتحان میں  ناکام رہے ہیں۔  کم ترقی یافتہ ممالک اورغریب عوام کو تنہا چھوڑ دیا گیا ہے ، تجارت میں تحفظ کی سوچ میں اضافہ ہوا ہے تو  ترسیل کے عمل میں خلل آیا ہے۔  معاشی   مسائل  کے ساتھ ساتھ مغربی ممالک میں نفرت آمیز جرائم سنگین سطح تک جا پہنچے ہیں۔

موجودہ عالمی نظام  کے   طویل مدت سے انصاف و استحکام کے قیام میں  بار آور ثابت نہ ہونے پر توجہ مبذول کرانے والے  جناب ایردوان نے  کہا کہ "مسلم امہ کو بولنے کا حق حاصل نہیں،  افریقہ، لاطینی امریکہ اور جنوبی ایشیا کے مطالبات پر کان نہیں دھرے گئے  اور  طاقت کی کمان اپنے ہاتھ میں رکھنے والے محض  5 ممالک کے مفادات کو بالائے طاق رکھنے والے اس نظام پر  مزید عمل پیرا رہنا نا ممکن ہے۔ اقوام متحدہ اور دیگر بین الاقوامی اداروں  میں اصلاحات  کی ضرورت کو اب نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔

انہوں نے بتایا کہ ترکی سالہا سال سے اصلاحات  کے تقاضے کو "دنیا 5 ممالک سے بڑی ہے "  کہتے ہوئے زیر لب لا رہا ہے، دنیا بھر کے تمام تر مظلومین اور متاثرین   کے نام پر ہماری یہ جدوجہد   بڑھتے ہوئے جاری رہے گی۔

 

 



متعللقہ خبریں