ترکی کشمیریوں کی آزادی حاصل کرنے تک حمایت کو جاری رکھے گا : آسمان ایردوان

ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں پاکستانی سفارتخانےکے احاطے میں  یوم استحصالِ کشمیر کے حوالے سے خصوصی تقریب کا اہتمام کیا گیا

1686292
ترکی کشمیریوں کی آزادی حاصل کرنے تک حمایت کو جاری رکھے گا : آسمان  ایردوان

ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں پاکستانی سفارتخانےکے احاطے میں  یوم استحصالِ کشمیر کے حوالے سے خصوصی تقریب کا اہتمام کیا گیا۔ اس موقع پر   برسراقتدار جسٹس اینڈ ڈولپمینٹ پارٹی کی انقرہ  سے رکن پارلیمنٹ آسمان ایردوان  نے  مہمان خصوصی کی حیثیت سے شرکت کی۔

تقریب کا آغاز  تلاوتِ کلام پاک  سے ہوا

جس کے بعد پاکستانی سفارتخانے کے ڈپٹی ہیڈ آف مشن ارشد جان پٹھان نے صدر مملکت عارف علوی اور وزیر اعظم پاکستان عمران خان کا پیغام پڑھ کر سنایا۔

اس موقع پر  برسراقتدار جسٹس اینڈ ڈولپمینٹ پارٹی کی انقرہ  سے رکن پارلیمنٹ آسمان ایردوان  نے  خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  ترکی اور پاکستان کی دوستی لازوال ہے۔ دونوں ملکوں کے عوام میں بھائی چارہ ہے۔ دونوں ملک غم اور خوشی میں ایک دوسرے کے ساتھ ہیں۔ ترکوں کے دلوں میں کشمیر اور کشمیری عوام کے لئے وہی محبت اور بھائی چارہ ہے جو پاکستانیوں کے لئے ہے۔ جس طرح صدر رجب طیب ایردوان ہر عالمی اور بین الاقوامی فورم پر کشمیر کے لئے آواز اٹھاتے ہیں ترک عوام بھی کشمیریوں کی آزادی میں ان کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ترکی کے صدر رجب طیب ایردوان نے 14 فروری 2020 میں پاکستان کی پارلیمنٹ سے تاریخی خطاب کرتے ہوئے  کہا تھا کہ " کشمیر ترکی کے لیے بھی اتنا ہی  اہم ہے جتنا پاکستان کے لیے" ۔ صدر ایردوان نے  مسئلہ کشمیر کو ستمبر 2019 کے جنرل اسمبلی میں خطاب کے دوران بھی اٹھایا تھا  اور کشمیروں پر ہونے والے ظلم و ستم کی طرف دنیا کی روجہ بھی مبذول کروائی تھی۔

آسمان  ایردوان نے  انے کہا کہ وہ ایشین  پارلمینٹری اسمبلی میں ترک وفد کی قائد کی حیثیت سے بھی مسئلہ کشمیر پر دنیا کی روجہ مبذول کرواتی رہتی ہیں ۔ انہوں نے اس موقع پر جموں کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کر نے  اور 5 اگست 2019 میں کشمیر میں بھارتی حکومت  کی  انتظامی تبدیلیاں کو مسترد کرتے ہوئے اس کی شدید مذمت کی۔

انہوں نے مظلوم کشمیریوں کی ہر ممکن مدد کی یقین دہانی کروائی اور کہا کہ بھارت کو کشمیر پر ظالمانہ قبضے کو ختم کرنا ہو گا۔

انہوں نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ترکی کشمیریوں کی خواہش اور اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی روشنی میں کشمیر کی آزادی تک ان کی حمایت جاری رکھے گا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ترکی میں پاکستان کے سفیر سائرس سجاد قاضی نے کہا بھارت نے کشمیر کی حیثیت بدلنے کے لیے مقبوضہ ریاست جموں و کشمیر کا خصوصی درجہ ختم کئے جانے کے غیر قانونی اقدامات کو دو سال بیت گے ہیں ۔ پاکستان اور ترکی سمیت دنیا بھر میں   آج یوم استحصال کشمیر منایا جا رہا ہے۔

5 اگست  2019 اس دن کی یاد دہانی ہے کہ بھارت اپنے ہی کئے ہوئے وعدوں پر عمل درآمد نہیں کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت ہی جنوری 1948 میں مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ لے کر گیا اور اقوام متحدہ کی قرار دادوں کو تسلیم کیا لیکن 73 سال گزرنے کے باوجود بھارت اپنے وعدے پورے نہیں کر رہا ہے۔ دوسری طرف بھارت کشمیریوں پر ہر روز ظلم کی ایک نئی داستان رقم کر رہا ہے۔

کشمیر کی آزادی کو دبانے کے لئے بھارت نے تمام سیاسی، سفارتی، عسکری، معاشی، پارلیمانی، آئینی و قانونی اور آبادی کے تناسب کے اعداد و شمار میں ہیر پھیر کے تمام طریقے آزما لئے ہیں لیکن کشمیری اپنی آزادی کی خواہش سے ایک قدم بھی پیچھے نہیں ہٹے ہیں۔

پاکستانی سفیر نے کہا کہ بھارت مقامی آبادی کو خوف زدہ کرنے کے لئے انسانی حقوق پامال کر رہا ہے۔ بھارت آج کے جدید دور میں بھی کشمیریوں پر ظلم و بربریت کی نئی مثالیں قائم کر رہا ہے۔ بھارت کے ہر ظلم اور زیادتی کا نتیجہ یہی برآمد ہو رہا ہے کہ کشمیریوں کی جدوجہد آزادی روز بروز تیز ہوتی جا رہی ہے۔

سائرس سجاد قاضی نے جموں کشمیر کے تنازعے کے حل کی حمایت میں ترکی کے اصولی موقف کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ ترک حکومت، پارلیمنٹ اور ترک عوام کشمیر کی آزادی میں ان کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔

سفارت خانہ پاکستان کے احاطے میں  اس موقع پر  مقبوضہ  کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور قابض بھارتی فوج کے ظلم و ستم پر ایک تصویری نمائش کا بھی اہتمام کیا گیا۔



متعللقہ خبریں