یونان کی طرف سے ترکی کے کھلے پانیوں میں دھکیلے گئے مہاجرین کو ڈوبنے سے بچا لیا گیا

ترکی کے ضلع ازمیر میں یونان کی کوسٹل سکیورٹی ٹیموں کی طرف سے ترکی کے کھلے پانیوں میں دھکیلے گئے 22 پناہ گزینوں کو ڈوبنے سے بچا لیا گیا

1605865
یونان کی طرف سے ترکی کے کھلے پانیوں میں دھکیلے گئے مہاجرین کو ڈوبنے سے بچا لیا گیا

ترکی کے ضلع ازمیر کی تحصیل دیکیلی میں، یونان کی کوسٹل سکیورٹی ٹیموں کی طرف سے ترکی کے کھلے پانیوں میں دھکیلے گئے 22 پناہ گزینوں کو ڈوبنے سے بچا لیا گیا ہے۔

اطلاع کے مطابق دیکیلی کے کھلے پانیوں میں ربڑ بوٹ میں مہاجرین کے ایک  گروپ کی نشاندہی کے بعد کوسٹل سکیورٹی کمانڈ آفس کی طرف سے  ریسکیو بوٹ کو علاقے میں بھیجا گیا۔

بچاو آپریشن میں یونان کی طرف سے ترکی کے کھلے پانیوں میں دھکیلے گئے 22 مہاجرین کو بچا لیا گیا ہے۔

مہاجرین کو، خشکی پر لانے اور  ضروری کاروائی کرنے کے بعد ،محکمہ امور مہاجرین کی طرف بھیج دیا گیا ہے۔

دوسری طرف یونانی کوسٹل سکیورٹی ٹیموں کی طرف سے سمندر میں پھینکے گئے اور 3 دن سےتلاش کئے جانے والے16 سالہ  صومالی مہاجر  محمد سیّد  کو بھی ترک کوسٹل سکیورٹی ٹیموں نے جزیرہ بوعاز سے ڈھونڈ لیا ہے۔

محمد سیّد سمندر میں پھینکے جانے کے بعد حفاظتی جیکٹ کی وجہ سے ڈوبنے سے بچ گیا اور تیرتا ہوا جزیرہ بوعاز پہنچ گیا۔ جزیرے میں چٹانوں کے درمیان موجود صاف پانی پی کر اور گھاس پھونس کھا کر اس نے اپنی جان بچائی۔

محمد سیّد کی صحت کی حالت تسلی بخش ہے۔

واضح رہے کہ چشمے کے کھلے پانیوں میں 19 مارچ کی صبح سمندر میں مہاجرین کے ایک گروپ کی موجودگی کی خبر موصول ہونے کے بعد ترک کوسٹل سکیورٹی ٹیموں نے آپریشن کر کے 3 افراد کو بچا لیا تھا جبکہ 3 افراد کی لاشیں ملی تھیں۔


ٹیگز: #مہاجرین

متعللقہ خبریں