آذربائیجان کے شہداء ترکی کے اور ترکی کے شہداء آذربائیجان کے شہداء ہیں: نابی آوجی

آرمینی حکومت کو چاہیے کہ ہوش کے ناخن لے اور اپنے داخلی مسائل کو عوام سے پوشیدہ رکھنے کے لئے اس قسم کے ایڈوینچروں سے پرہیز کرے: نابی آوجی

1458394
آذربائیجان کے شہداء ترکی کے اور ترکی کے شہداء آذربائیجان کے شہداء ہیں: نابی آوجی

یورپی سلامتی و تعاون کمیٹی 'او ایس سی ای' منسک گروپ کی پارلیمانی اسمبلی کے  ترک گروپ کے سربراہ نابی آوجی نے آرمینیا کی طرف سے آذربائیجان پر حملوں کے مقابل 'او ایس سی ای' سے حرکت میں آنے کی اپیل کی ہے۔

آوجی نے اناطولیہ ایجنسی کے لئے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ آذربائیجان اور ترکی دو ملک، واحد ملت ہیں، آذربائیجان کے شہداء ترکی کے اور ترکی کے شہداء آذربائیجان کے شہداء ہیں۔

انہوں نے کہا ہے کہ جمہوریہ ترکی کے عوام آذربائیجان کے عوام کے ساتھ ہیں۔ آرمینیا کا یہ کوئی پہلا حملہ نہیں ہے۔ بین الاقوامی برادری، اقوام متحدہ اور او ایس سی ای کو اس واقعے کی پُر زور مذمت کرنی چاہیے اور اس کے ذمہ داروں کو منظر عام پر لانا چاہیے۔

آوجی نے کہا ہے کہ بین الاقوامی برادری کا آرمینی حملوں کو نظر انداز کرنا کہ اس وقت کر بھی رہی ہے، آرمینیا کے گستاخ روّیے کی مزید حوصلہ افزائی کا مفہوم رکھتا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ آرمینی حکومت کو ہوش کے ناخن لینا چاہئیں اور اپنے داخلی مسائل کو عوام سے پوشیدہ رکھنے کے لئے اس قسم کے ایڈوینچروں سے پرہیز کرنا چاہیے۔

انہوں نے کہا ہے کہ آرمینی عوام کو سابق شاہی طاقتوں کی طرف سے علاقے سے غیر متعلقہ حوصلہ افزائیوں، تحریکوں اور اکساہٹوں کے جھانسے میں نہیں آنا چاہیے۔ ہم، ترکی، آذربائیجان، جارجیا، روس اور آرمینیا ایک دوسرے کے ہمسائے ہیں۔ ہم علاقے میں امن کا بول بالا کر سکتے ہیں۔ لیکن اس نوعیت کے جارحانہ اقدامات کئے جاتے رہے تو اس کا نقصان سب سے پہلے آرمینی عوام کی خوشحالی اور امن و امان کو پہنچے گا۔

نابی آوجی نے کہا ہے کہ منسک گروپ کو چاہیے کہ اس نوعیت کے واقعات کے سدباب کے لئے اپنے فرائض کو پورا کرے، واقعے کا تمام پہلووں سے جائزہ لے اور اس کی تکرار کی روک تھام کے لئے ضروری حفاظتی تدابیر پر سنجیدہ شکل میں غور کرے۔



متعللقہ خبریں