ایردوان، واحد اسلامی رہنما جو اسلامی ممالک کے ساتھ یورپی ممالک کو بھی طبی امداد فراہم کررہے ہیں

ایردوان نے  فلسطینیوں ، کشمیریوں  ، اوئغر ترکوں اور روہنگیا  مسلمانوں کو تنہاہ  نہیں چھوڑا ہے وہ اس آفت  اور  وباء   کے موقع پر بھی تنہا نہیں چھوڑیں گے۔ تفصیلات کے لیے ویڈیو کو کلک کیجیے

1401034
ایردوان، واحد اسلامی رہنما جو اسلامی ممالک کے ساتھ یورپی ممالک کو بھی طبی امداد فراہم کررہے ہیں

https://www.youtube.com/watch?v=K6VpNHHNfOY&t=15s

تفصیلات کے لیے اوپر دیے گئے ویڈیو لنک کو کلک کیجیے

ترکی کے صدر  رجب طیب ایردوان ہی ہیں،   جن کا دل    ان  تمام غریب اور  نادار  نہتے  مسلمانوں کے لیے دھڑکتا ہے اور یہ تمام مسلمان بھی  ان کو اپنے دلوں میں بسائے ہوئے ہیں اور ان کو یقین  ہے جس طرح   ایردوان نے  فلسطینیوں ، کشمیریوں  ، اوئغر ترکوں اور روہنگیا  مسلمانوں کو تنہاہ  نہیں چھوڑا ہے وہ اس آفت  اور  وباء   کے موقع پر بھی تنہا نہیں چھوڑیں گے۔ ترکی اس وقت  صحت کے شعبے کے لحاظ سے  تمام اسلامی ممالک پر ہی نہیں بلکہ  زیادہ تر  یورپی ممالک  پر بھی برتری حاصل کیے ہوئے ہے۔ ایردوان سے قبل  ترکی میں صحت کے شعبے   کی  حالتِ زار کیسی  تھی ۔ صرف ایک جملہ ہی کہوں گا جس سے  اس دور کے ترکی کی  صحت کے شعبے کی عکاسی ہوتی ہے۔ لوگ  ٹھٹھرتی سردی میں  آدھی  رات ہی کو ہسپتال  یاکلینک  میں  ڈاکٹر سے معائنہ کروانے کے لیے  لائینوں  میں لگ جایا کرتے تھے  اور اب۔ فرق صاف  ظاہر ہے۔ اب اس  کورونا وائرس  وباء  کے موقع پر  تمام  ہی مریض   بلا امتیاز  اسپتالوں میں  فائیو سٹار ہوٹلز  جیسی سہولتیں  حاصل کرتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں ۔    ان سہولتوں کے لحاظ سے  کیا امریکہ  اور یورپی ممالک  ترکی کا مقابلہ کرسکتے ہیں؟  ہر گز نہیں ۔ ایردوان ایک ایسا ویژنری  لیڈر ہے  جس نے   وقت سے بہت پہلےہی  ترکی بھر میں  شہر حستانےلری City hospitals  یعنی  شہر اسپتالوں کا جال بچھادیاتھا۔

صدر رجب  طیب ایردوان  موجودہ دور میں چند ایک اسلامی ممالک  کو چھوڑ  تمام ہی اسلامی ممالک کے رہنماوں سے قریبی رابطہ قائم کیے ہوئے ہیں اور ان کو ہر ممکنہ مدد کا یقین ہی نہیں دلا رہے ہیں  بلکہ عملی طور پر تمام ضروری  طبی سازو سامان  بھی پہنچا رہے ہیں ۔ ترک تعاون اور کوارڈینیشن  ایجنسی   ( تیکا) پاکستان، فلسطین،   بنگلہ دیش ، کشمیر ،  بوسنیا، آذربائیجان او ر غریب افریقی  اسلامی ممالک  کو    امداد فراہم کررہی  ہے۔ اس سے بھی بڑھ کر  صدر ایردوان  صرف اسلامی ممالک ہی کو نہیں بلکہ  اٹلی، اسپین، برطانیہ  اور نیٹو  کے متاثرہ ممالک کی جانب سے کی جانے والی اپیل پر  طبی سازو سامان روانہ کررہے ہیں۔  کیا بات ہے ۔اب الٹی گنگا بہہ رہی ہے اس سے قبل تو ہم نے زندگی بھر اسلامی ممالک کو  یورپی ممالک  ہی کا محتاج دیکھا ہے۔ علاوہ ازیں ترکی  نے اپنے تراسی ملین افراد کو بلامعاوضہ  ہر ہفتے  پانچ پانچ عدد ماسک ان کے  محلے یا گھر کے نزدیک ترین کیمسٹ کی  دکان پر پہنچا کر ایک اسلامی فلاحی ریاست  ہونے کا ثبوت فراہم کردیا  جس کی دیگراسلامی ممالک صرف دعویٰ ہی کرتے ہیں اور صدر ایردوان نے کرکے دکھا دیا ہے

 



متعللقہ خبریں