آئیے، انتہا پسندی اور دھڑے بندیوں کے خلاف باہم متحد ہو جائیں: میولود چاوش اولو

صرف آج ہی نہیں بلکہ تاریخ بھر میں ترکی کو ظلم اور ناانصافیوں  کی وجہ سے گھر بار ترک کرنے والوں کے لئے اپنے دروازے  کھولنے والا ملک ہونے پر فخر رہا ہے: میولود چاوش اولو

1091302
آئیے، انتہا پسندی اور دھڑے بندیوں کے خلاف باہم متحد ہو جائیں: میولود چاوش اولو

ترکی کے وزیر خارجہ میولود چاوش اولو نے انتہاپسندی اور دھڑے بندیوں کے خلاف جدوجہد کے لئے باہم متحد ہونے کی اپیل  کی ہے۔

چاوش اولو نے نیویارک میں اقوام متحدہ کے مرکزی دفتر میں منعقدہ تہذیبوں کے اتحاد  کے 8 ویں گلوبل فورم میں شرکت کی۔

فورم سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ پوری دنیا میں تعصب،  حقارت اور نفرت کے خلاف ہر ایک کا ایک پائیدارعزم اور سیاسی ارادے کا اظہار کرنا ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ گلوبل سطح پر ڈائیلاگ اور افہام و تفہیم کے ساتھ تعاون کے لئے اتحاد کا زیادہ مضبوط، زیادہ واضح ، فعال ،موئثر اور سیاسی حیثیت سے  مقصد سے ہم آہنگ   ہونا ضروری ہے۔

چاوش اولو نے کہا کہ یورپ میں دائیں بازو  کی انتہا پسندی  میں اس قدر اضافہ ہو گیا ہے کہ اس کی مثال نہیں ملتی ۔ ہمیں یورپ جیسے علاقائی اور گلوبل رجحانوں پر افسوس ہے۔

انہوں نے کہا کہ غیر ملکیوں کے خلاف دشمنی، نسلیت پرستی، مسلمانوں کے خلاف نفرت اور مسلمان مخالف افکار  میں مہاجرت اور مہاجرین کی لہروں میں اضافے کے ساتھ ہم  آہنگ شکل میں اضافہ ہوا ہے۔

چاوش اولو نے کہا کہ صرف آج ہی نہیں بلکہ تاریخ بھر میں ترکی کو ظلم اور ناانصافیوں  کی وجہ سے گھر بار ترک کرنے والوں کے لئے اپنے دروازے  کھولنے والا ملک ہونے پر فخر رہا ہے۔ ہمارے ملک میں اپنے لئے ایک گھر بنانے والے انسانوں نے ہمارے معاشرے کو زیادہ ثروت بخشی ہے ۔ ترکی اس وقت ایک انٹرپرائزر اور انسانی خارجہ پالیسی کے ساتھ ہم آہنگ شکل میں دنیا بھر میں سب سے زیادہ مہاجرین کو پناہ دینے والا ملک ہے۔

تہذیبوں کے اتحاد کے لئے عالمی برادری سے باہمی تعاون اور وعدوں کے اپیل کرتے ہوئے  چاوش اولو نے کہا کہ آئیے، انتہا پسندی اور دھڑے بندیوں کے خلاف   باہم متحد ہو جائیں۔ ترکی موئثر کثیر الفریقیت  پر یقین رکھنے والے ملک کی حیثیت سے اس پہلو پر مشترکہ کوششوں  کے ساتھ تعاون  کرنے کے لئے تیار ہے۔



متعللقہ خبریں