مسجد اقصیٰ کو عبادت کے لیے بند کرنا انتہائی تکلیف دہ بات ہے، ترکی

بروز جمعہ مسجد ِ اقصی ٰ کے صحن  میں تین فلسطینی نوجوانوں کو قابض اسرائیلی پولیس  نے گولی مارتے ہوئے ہلاک کر دیا تھا

772578
مسجد اقصیٰ کو عبادت کے لیے بند کرنا انتہائی تکلیف دہ بات ہے، ترکی

نائب وزیر اعظم  اور حکومتی ترجمان نعمان قرتلمش کا کہنا ہے کہ اسرائیل کی جانب سے مسجد اقصیٰ کو عبادت  کے لیے بند کرنا   ایک انتہائی تکلیف دہ   فیصلہ ہے۔

جناب قرتلمش نے کابینہ  کے اجلاس کے بعد ایک پریس کانفرس کا اہتمام کرتے اس بات کی یاد دہانی کرائی کہ مسلم امہ کے لیے مکہ مکرمہ ، مدینہ منورہ اور القدس کے حرمین الاشریفین  انتہائی  مقدس مقامات ہیں۔ جبکہ القدس کا حرمین الاشریف مسلمانوں کا قبلہ اول اور تین عظیم مساجد میں سے  ایک ہے۔

انہوں نے بتایا کہ یہ مسجد سن 1967 کی جنگوں کے بعد کبھی بند نہیں ہوئی تھی خاصکر نماز جمعہ  کی یہاں پر لازمی طور پر ادائیگی کی گئی تھی۔لہذا  اس ماحول میں  اور  اسرائیل کے  ایک جانب سے امن وغیرہ  کی بات کرنے کے  ایک دور میں  مذکورہ فیصلے  پر عمل درآمد ناقابل قبول ہے۔ یہ ایک انسانی جرم اور عبادت کرنے کی حریت کی سراسر پامالی ہے۔

بروز جمعہ مسجد ِ اقصی ٰ کے صحن  میں تین فلسطینی نوجوانوں کو قابض اسرائیلی پولیس  نے گولی مارتے ہوئے ہلاک کر دیا تھا۔

اس پر مسجد ِ اقصیٰ کو دہشت گردی کےبہانے   کے ساتھ عبادت کے لیے بند کر دیا گیا تھا۔

 

 

 



متعللقہ خبریں