ترکی یورپی یونین کی طرف سے ایک اہم وفد کی میزبانی کر رہا ہے

غیر منّظم ہجرت کو کنٹرول کرنا اور منّظم ہجرت کی حوصلہ افزائی کرنا یورپی یونین اور ترکی کے درمیان ایک اہم موضوع ہے۔ چاوش اولو

468111
ترکی یورپی یونین کی طرف سے ایک اہم وفد کی میزبانی کر رہا ہے

مہاجرین کی واپسی کا عمل جاری ہے اور اس دوران ترکی یورپی یونین کی طرف سے ایک اہم وفد کی میزبانی کر رہا ہے۔

ترکی کے وزیر خارجہ میولود چاوش اولو اور یورپی یونین کے وزیر اور چیف نگوشیئٹر وولکان بوز کِر نے یورپی یونین کے وفد سے ملاقات کی۔

یورپی یونین کے ٹرم چئیر مین ہالینڈ کے وزیر خارجہ برٹ کونڈرس کی زیر قیادت اس مہمان وفد میں سلوواکیہ کے امور خارجہ اور یورپی امور کے وزیر میورسلاو لاجیک ، فرانس کے یورپی امور کے ذمہ دار سیکرٹری ہیرلم ڈیسیر اور پرتگال کی یورپی امور کی ذمہ دار سیکرٹری مارگاریڈا مارکوئس شامل ہیں۔

چراغاں پیلس میں اجلاس سے قبل وزیر خارجہ چاوش اولو اور وزیر خارجہ کونڈرینس نے اخباری نمائندوں کے لئےبیانات دئیے۔

چاوش اولو نے اپنے بیان میں کہا کہ غیر منّظم ہجرت کو کنٹرول کرنا اور منّظم ہجرت کی حوصلہ افزائی کرنا یورپی یونین اور ترکی کے درمیان ایک اہم موضوع ہے۔ اور اس معاملے میں ہمارا ایک روڈ میپ موجود ہے۔ 4 اپریل سے مہاجرین کی واپسی عملی طور پر شروع ہو گئی ہے۔ یہ عمل کیسا جا رہا ہے اور کیسا جائے گا اس کا بھی ہم جائزہ لیں گے۔

وفد کی طرف سے بیان دیتے ہوئے برٹ کونڈرینس نے کہا کہ جمہوریہ ترکی کی اور ترک عوام کی مہمان نوازی اصل میں 2 ملین سے زائد شامی مہاجرین کو پناہ دینے سے ہی سامنے آ گئی ہے۔ اب ہم باہمی سمجھوتے کی رُو سے انسانی اسمگلنگ کی اکانومی کو ختم کرنا اور مہاجرین کے جانی نقصان کا سدباب کرنا چاہتے ہیں۔

مذاکرات میں ترکی۔ یورپی یونین تعلقات اور علاقائی اور بین الاقوامی پیش رفتوں پر بھی بات چیت کی گئی۔



متعللقہ خبریں