کیا آپ جانتے ہیں۔ 76

کیا آپ جانتے ہیں۔ 76

1653059
کیا آپ جانتے ہیں۔ 76

کیا آپ کو معلوم ہے کہ دنیا کی پہلا اسٹیمر جہاز  عہد عثمانیہ میں ترکوں کی طرف سے بنایا گیا؟

 

1800 کے سالوں میں استنبول باسفورس کے دونوں درّوں کے درمیان رسل و رسائل عام کشتیوں کے ذریعے کی جاتی تھی۔ 1840 میں چھوٹے اسٹیمروں نے رسل و رسائل کی خدمات دینا شروع کیں اور 1850 میں شرکتِ خیرئیے کے نام سے ایک کمپنی قائم کی گئی جس کے تیار کردہ زیادہ بڑے  اسٹیمر جہازوں نے استنبول کے عوام کی بحری رسل و رسائل کی ضرورت کو پورا کرنا شروع کر دیا۔کمپنی کے منتظمین میں سے حسین حق افندی  جدیدیت پسند انسان تھےاور ایک طویل عرصے سے باسفورس میں رسل و رسائل کے کسی ایسے حل پر سوچ رہے تھے کہ جو خاص طور پر گاڑیوں کی نقل و حرکت میں آسانی پیدا کرے۔حسین حق افندی نےکمپنی کے بانی کے ساتھ مل کر  ایک سال کی محنت سے ایک ایسے اسٹیمر کا نقشہ تیار کیا جس کا عرشہ ہموار  اور سواریاں اٹھانے کےلئے  موزوں تھا اور اسٹیمر کے دونوں کناروں پر بند موجود تھے۔ اس ڈیزائن کو برطانیہ کے شپ یارڈ میں بھیجا گیا۔ انگریز اس ڈیزائن کو دیکھ کر حیران رہ گئے۔

 

اسٹیمر کی تیاری تقریباً 2 سال تک جاری رہی۔1871 میں مکمل ہونے والے اس اسٹیمر کا نام "سہولت "رکھا گیا۔ سہولت اسٹیمر نے اپنا پہلا سفر 1872 میں اسکودار سے کاباتاش کے درمیان کیا۔ سہولت اسٹیمر 89 سال تک استنبول باسفورس کے دونوں درّوں کے درمیان رسل ورسائل کی خدمات سرانجام دیتا رہا۔



متعللقہ خبریں