کیا آپ جانتے ہیں ۔ 49

کیا آپ جانتے ہیں ۔ 49

کیا آپ جانتے ہیں ۔ 49

کیا آپ کو معلوم ہے کہ وسطی ایشیاء کے ترک " تارہانہ" کے نام سے جو دانے دار سفوف تیار کرتے  ہیں وہ دنیا کے ابتدائی  تیار شوربوں   میں سے ایک ہے۔

تارہانہ سُوپ آٹے، دہی، خمیر، سبزیوں  اور مصالحہ جات  کو ملا کر خمیر اٹھنے کے لئے چھوڑ دیا جاتا ہے۔ جب یہ آمیزہ خشک ہو جاتا ہے تو اسے موٹا موٹا پیس  لیا جاتا ہے۔ اس طریقے سے جو  دانے دار اور خمیر شدہ  خشک دلیہ  حاصل ہوتا ہے اسے تارہانہ کہا جاتا ہے۔

یہ تارہانہ وسطی ایشیاء کے ترکوں کا تیار کردہ مرغوب سُوپ  ہے اور دنیا کے ابتدائی تیار سُوپوں میں سے ایک ہے۔

تارہانہ سلجوقی حکمرانوں کے طفیل مشرق وسطی اور وہاں سے اناطولیہ پہنچا۔ اس کا نام کہاں سے اور کیسے نکلا اس کے بارے میں کوئی حتمی معلومات موجود نہیں ہیں۔ تاہم  لفظ تارہانہ کی جڑ بنیاد کے بارے میں بعض روایات پائی جاتی ہیں۔ ان میں سب سے زیادہ مقبول روایت کے مطابق تارہانہ اصل میں لفظ "دار خانہ" سے نکلا ہے۔ ایک دن رمضان کے مہینے میں سلطان ایک غریبوں کے محلّے میں گھومنے پھرنے  جاتا ہے۔ افطاری کے وقت وہ ایک گھر کا مہمان بنتا ہے۔ میزبان  کے دستر خوان پر صرف ایک سُوپ اور روٹی ہے۔ سلطان سُوپ کو بہت پسند کرتا ہے اور پوچھتا ہے کہ یہ کیا ہے؟ گھر کی مالکن بوڑھی عورت اکتاہٹ کے ساتھ کہتی ہے کہ اے سلطان یہ دار خانہ یعنی غریب گھر کا سُوپ ہے۔ میں آپ کو صرف یہی پیش کر سکتی ہوں۔ بسم اللہ کیجئے"۔  دار خانہ  کے نام سے یہ سُوپ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ تارہانہ بن گیا۔

ترکی میں تارہانہ کلچر نے سب سے زیادہ ضلع قاہرمان ماراش میں فروغ پایا ۔ یہاں تاراہانہ کی بہت سے اقسام پائی اور استعمال کی جاتی ہیں۔ اس کے علاوہ عُشاق، آفیون کھاراحصار اور مالاتیا کے اضلاع اور باندرما، گیونین، گیدیز اور بے پازار،  تحصیلوں کا تارہانہ بھی ملک بھر میں شہرت رکھتا ہے۔

 



متعللقہ خبریں