پاکستان ڈائری - 48

آج کی پاکستان ڈائری میں ہم بات کریں گے شوگر ذیابیطس کے حوالے سے یہ موذی مرض پاکستان میں تیزی سے پھیل رہا ہے۔اس ہی حوالے سے ہم نے ٹی ڈی سی کے ڈاکٹر اسجد حمید کے ساتھ خصوصی نشست کا اہتمام کیا

پاکستان ڈائری - 48

پاکستان ڈائری - 48

 آج کی پاکستان ڈائری میں ہم بات کریں گے شوگر ذیابیطس کے حوالے سے یہ موذی مرض پاکستان میں تیزی سے پھیل رہا ہے۔اس ہی حوالے سے ہم نے ٹی ڈی سی کے ڈاکٹر اسجد حمید کے ساتھ خصوصی نشست کا اہتمام کیا ۔ڈاکٹر اسجد حمید ماہر امراض شوگر اور اینڈوکرائنولوجسٹ ہیں ۔وہ شوگر اور اس متعلقہ بیماریوں کا علاج، موٹاپے کا علاج، تھائی رائیڈ،ہارمونز کی خرابی اور وٹامن ڈی کی کمی کا علاج کرتے ہیں ۔ڈاکٹر اسجد حمید کنسلٹنٹ فزیشن اور اینڈوکرائنولوجسٹ ہیں ۔اس وقت وہ ابوظہبی میں بطور ڈاکٹر فرائض انجام دے رہے ہیں ۔میڈیکل سکول آف سندھ یونیورسٹی سے گریجویشن کیا۔پوسٹ گریجویٹ اور سپشلٹ ٹرینگ آئرلینڈ سے مکمل کی اور ممبر رائل کالج آف فزیشن بن گئے۔برطانیہ میں اہم اداروں میں کام کیا ۔ڈاکٹر اسجد نے2011 میں پاکستان میں the diabetes centre کی بنیاد رکھی ۔وہ ہر ماہ ابو ظہبی سے پاکستان آتے ہیں اور ایک ہفتہ یہاں مریض دیکھتے ہیں۔

شوگر کی بروقت تشخیص نہ ہونے سے ایک لاکھ افراد موت کے منہ میں جارہے ہیں ۔ذیابیطس سینٹر پھلگراں ایکسپریس وے ایک ہی چھت تلے مستحق اور صاحب ثروت مریضوں کو علاج کی سہولیات دے رہا ہے۔غریب مریضوں کو یہاں مفت علاج کی سہولت حاصل ہے۔ڈاکٹر اسجد کہتے ہیں شوگر دو طرح کی ہوتی ہے۔ٹائپ ون اور ٹائپ ٹو اس کے ساتھ حاملہ خواتین کو بھی شوگر ہوجاتی ہے۔تاہم بچے کی ولادت کے ساتھ زیادہ تر خواتین یہ ختم ہوجاتی ہے ۔یہ عورتیں اگر وزن بڑھا لیں تو ذیابیطس واپس آنے کا پچاس فیصد امکان ہے۔دوران حمل بھی خود کو متحرک رکھیں اور نشاستے والی چیزیں کم کھائیں ۔وزن کو کچھ عرصے بعد واپس اصل پر لے کر جائیں ۔ڈاکٹر اسجد حمید کہتے ہیں واپس اصل وزن پر جانا بہت ضروری ہے اس سے خواتین شوگر سے بچ سکتے ہیں ۔بچوں کو ٹائپ ون شوگر ہوتی ہے ان کو انسولین لینی پڑتی ہے۔وہ کہتے ہیں میرے دو شعبے ہیں ایک ذیابیطس اور دوسرا اینڈوکرائنولوجی ۔ذیابیطس دوسری بیماریوں کا بھی باعث ہے۔میل ہارمومز عورتوں میں متحرک ہو جاتے ہیں، ازدواجی تعلقات متاثر ہوتے ہیں، بے اولادی، بانجھ پن، موٹاپا، گردے متاثر ہونا، نابینا پن ،ہارٹ اٹیک اور فالج ہونے کا امکان اس سے بڑھ جاتا ہے۔دوسرا شعبہ ہارمونز کو ڈیل کرتا ہے۔اسکے ساتھ ہم وٹامن ڈی کی کمی کو بھی ڈیل کرتے ہیں ۔وہ کہتے ہیں ذیابیطس کو ہم خاموش قاتل کہتے ہیں ۔ان لوگوں کو اپنا ٹیسٹ کرانا چاہیے وہ موٹاپے کا شکار ہیں،  جن کی فیملی ہسٹری ہے ۔اگر آپ کو بار بار پیشاب آئے، پنڈلی ٹانگوں میں درد ہو ،نیند کا زیادہ ہونا ،گردن کے پیچھے سے کالی ہونا ،کھانے کے بعد فوکس نہ کر پانا جو لوگ پیٹ کی وجہ سے پاوں نہیں دیکھ سکیں انہیں شوگر کا ٹیسٹ کروانا چاہیے ۔ٹائپ ون ذیابیطس میں لبلبہ کام نہیں کرپاتا انکو ہمیشہ کے لئے انسولین دینا پڑتی ہے۔دنیا میں نوے فیصد لوگوں کو ٹائپ ٹو ذیابیطس ہوتی ہے جن میں انکا لبلبہ کام تو کر رہا ہوتا لیکن اتنا نہیں جتنی ضرورت ہے۔اس کے پیچھے فیملی ہسٹری،موٹاپا اور غیر متوازن خوراک کارفرما ہے۔سب سے پہلے تو اپنا خیال رکھیں اور لائف اسٹائل چینج کریں ۔ہفتے میں چار گھنٹے ایکسائز کریں ۔روٹی میدہ چاول میٹھا کم کردیں ۔ہمیں متوازن غذا گرل فوڈ،  سلاد، سبزیاں کھانے چاہیں۔

ذیابیطس وباء کے طور پر اسلام آباد میں پھیل رہی ہے وہ کہتے ہیں اس کے پیچھے وجہ تعلیم کی کمی اور ورزش نہ کرنا ہے۔لوگ تینوں ٹائم بھرپور نشاستے والی خوارک کھاتے ہیں ۔بیکری آئٹم جلیبی سموسے تلی ہوئی اشیاء کھانا عام ہے۔یہ بیماری پھیلتی جارہی ہے اور پاکستان میں ٹرینڈ ڈاکٹر کم ہیں ۔شاید 220 بیس ملین آبادی کے لئے 8 سے 9 ماہر ڈاکٹر  موجود ہیں ۔یہ ایک صحت کی ایمرجنسی ہے جس سے حکومت کو ڈیل کرنا ہوگا۔گینگرین سے ایک لاکھ لوگوں کی ٹانگیں ضائع ہوجاتی ہیں، ان مریضوں میں ہارٹ اٹیک اور اسٹروک ہونے کا زیادہ امکان ہوتا ہے۔آنکھوں کی بینائی متاثر ہوتی ہے نابینا پن کی بڑی وجہ شوگر ہے۔ چالیس سے پچاس ہزار لوگوں کے گردے ناکارہ ہو جاتے ہیں ۔آنکھیں، گردے، پاوں ،شادی شدہ افراد کے ازدواجی تعلقات شوگر کی وجہ سے متاثر ہو جاتے ہیں ۔اینڈوکرائنولوجی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا یہ فیلڈ باڈی کے اندر ہارمونز کو ڈیل کرتی ہے۔ہمارے جسم کے اندر گلینڈز ہوتے ہیں جو ہارمونز ریلیز کرتے ہیں جوکہ باڈی میں مخلتف فنکشنز ،ہمارے جذبات اور سیکس لائف کو ڈیل کرتا ہے ۔اگر انکا توازن بگڑ جائے تو مخلتف بیماریوں کی صورت میں سامنے آتا ہے۔تھائیراڈ کا پرابلم ہوتا ہے تو وزن زیادہ ہوتا ہے نیند زیادہ آنا یاداشت پر اثر ہونا یہ ہائپو تھائیراڈ ہوتا ہے۔وزن کم ہونا ،ذہنی توازن بگڑ جانا ، دل کی دھڑکن تیز ہونا یہ ہائپرتھیرازم ہے ۔کچھ برین سے متعلق ہوتے ہیں کچھ میں پی سی او ہوتا ہے ان کا وزن بڑھ جائے ان سب کا تعلق ہارمونز سے ہے۔ڈاکٹر اسجد کہتے ہیں بے اولادی یا دیگر مردانہ زنانہ امراض کے لئے کبھی حکیم کے پاس نہ جائیں ۔ڈاکٹر کے پاس جائیں وہاں پر ٹیسٹ کرائیں ادویات لیں، وزن کم کریں، ورزش کریں اس سے افاقہ ہوتا ہے۔وہ کہتے ہیں کہ ہم ادویات دیتے ہیں، ڈائٹ پلان ہوتا ہے کچھ کیسز میں سرجری بھی ہوتی ہے۔مرد عورتوں میں یہ بیماریاں زیادہ ہوگی ہیں ۔لوگ اب باشعور ہیں حساس ہیں ۔عورتیں زیادہ توجہ دیتی ہیں لیکن مرد علاج سے کتراتے ہیں ۔جب بھی کوئی جوڑا بے اولادی کا سامنا کرے تو ٹیسٹ مرد اور عورت دونوں کے ہوتے ہیں ۔ذیابیطس اسپرم کا ڈی این اے خراب کردیتا ہے۔بہت کیسیز میں علاج ہوجاتا ہے ۔

ڈاکٹر اسجد کہتے ہیں کہ ہائیپوگلیسمیا میں مریض کی شوگر لو ہوجاتی ہے۔60 ملی گرام سے نیچے شوگر آجانا میڈیکل ایمرجنسی ہے کوشش کرنی چاہئے یہ نہ ہو اس سے مریض کے اعتماد میں کمی آتی ہے اسکا علاج متاثر ہوتا ہے۔کھجور کیلا دودھ مریض کو دیا جائے ۔شوگر کو سو سے اوپر آنے تک مریض کو کھلاتے رہیں اگر حالت ٹھیک نہ ہو تو اس کو ہسپتال منتقل کریں ۔وہ کہتے ہیں مریض کو ہر تین ماہ میں ایک بار ڈاکٹر کو دیکھنا چاہیے۔
ٹی ڈی سی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مجھے یہاں پر مریضوں کی تکلیف دیکھ کر دکھ ہوتا تھا اس لئے میں نے فیصلہ کیا کہ میں باہر کے ساتھ ساتھ یہاں بھی کام کرو گا ۔ستر کروڑ کا یہ پروجیکٹ ہے اللہ کی مدد ساتھ تھی دوستوں نے بہت ساتھ دیا ۔سب کو گزارش کی اس پروجیکٹ میں مدد کی جائی۔یہ چار سال میں مکمل ہوگیا ۔ ذیابیطس سینٹر میں ہم غریب افراد کا مفت علاج کرتے ہیں، سفید پوش افراد کو پچاس فیصد رعایت حاصل ہے۔یہ پاکستان چائنہ یوکے یو ایس اے میں رجسٹرڈ ہے ۔یہ ایس ای سی پی کے ساتھ رجسٹرڈ ہے اور آڈٹ بھی ہوتا ہے۔


یہاں پر سولہ سے سترہ شعبے ہیں ذیابیطس کا علاج ، گردوں کا ڈائیلائیس ، پاوں کا مکمل علاج،آنکھوں کا مکمل علاج مریض کے ٹیسٹ ہوتے ہیں اور جب آپ ڈاکٹر کے پاس جاتا ہے رپورٹ انکے سامنے موجود ہوتی ہے۔ہمارے پاس ایکسرے لیب کی سہولت بھی موجود ہے۔آہستہ آہستہ ہم مزید شعبے لے آئیں گے۔ڈاکٹر اسجد نے ٹی آر ٹی کے قارئین کے لئے خصوصی پیغام دیتے ہوئے کہا کہ سنت نبوی کو فالو کریں، کھانا اعتدال سے کھائیں، روٹی چاول میٹھا کم کریں، ہفتے میں تین بار ورزش کریں ۔ذیابیطس کے مریض باقاعدگی سے ڈاکٹر کو چیک کروائیں ۔

 

 



متعللقہ خبریں