پاکستان ڈائری - 22

وطن ماں ہے یہ دھرتی ہماری ماں ہے۔جو ہمیں رہنے کے لئے زمین دیتی ہے ،کام کرنے کے لئے مواقع فراہم کرتی ہے ، جہاں ہم آسانی سے اپنی زندگی بسر کر سکتے ہیں

پاکستان ڈائری - 22

پاکستان ڈائری - 22

کہتے ہیں وطن ماں ہے یہ دھرتی ہماری ماں ہے۔جو ہمیں رہنے کے لئے زمین دیتی ہے ،کام کرنے کے لئے مواقع فراہم کرتی ہے ، جہاں ہم آسانی سے اپنی زندگی بسر کر سکتے ہیں ۔آزادی کتنی بڑی نعمت ہے اپنا آزاد وطن ہونا کتنی بڑی نعمت ہے یہ تو کوئی محکوم قوموں سے پوچھے ۔کشمیر، فلسطین اور روہنگیا قوم کے ساتھ کیا کیا ظلم نہیں ڈھائے گئے جن کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔اس لئے آزاد وطن کی قدر کرنا بہت ضروری ہے۔

ماں گھر چلانے کے لئے کچھ قواعد و ضوابط رکھتی ہے جس کو ماننا بچوں پر فرض ہے۔ماں سراپا پیار ہے لیکن اگر اس کی حکم عدولی کی جائے تو غصہ بھی کرے گی اور ڈانٹ بھی دے گئ پر بعد میں پھر اپنی اولاد کو گلے بھی لگالیتی ہے ۔دھرتی ماں کادل اتنا بڑا ہے کہ اولاد اسکو طعنے دیتی ہے طنز کے نشر چلاتی ہے لیکن ماں چپ کرکے سہتی رہتی ہے۔پر جب ماں کے یہ بگڑے ہوئے کچھ بچے پیسوں طاقت کی لالچ میں گھر کو آگ لگانے کی کوشش کرتے ہیں تو دھرتی ماں کے دوسرے بیٹے جو ماں سے پیار کرتے ہیں اس کے تابع رہتے ہیں  اپنے سائبان کو بچانے کو سامنے آجاتے ہیں ۔

کہتے ہیں اولاد بڑی ہوجائے تو زیادہ سختی نہیں کرنی چاہئے لیکن جو قواعد و ضوابط کو توڑ کر دھرتی ماں کو نقصان پہنچانے کی کوشش کرے تو اس پر سخت سزا بنتی ہے۔ یہ وطن ہمارے آباواجداد نے اس لئے بنایا تھا کہ ہم آزادی سے پاکستان میں اپنی زندگی بسر کریں اور اپنے مذہب کے مطابق زندگی گزاریں ۔سب یہ سوال کرتے ہیں اس وطن نے ہمیں کیا دیا تو میں کہتئ ہو آپ نے وطن کو کیا دیا۔یہ وطن ہے تو ہماری شناخت ہے ،یہ وطن ہے تو ہم عزت سے زندگی گزار رہے ہیں ۔اگر اس آزادی کا احساس نہیں تو ان ملکوں کی طرف دیکھا جائے جہاں جنگ ہورہی ہے۔روہنگیا قوم کی طرف دیکھا جائے کشتیوں میں جائے پناہ کے لئے دربدر بھٹک رہے ہیں کوئی انہیں زمین کا ایک ٹکڑا دینے کے لئے تیار نہیں ۔پھر ہمارے ملک میں یہ لوگ کون ہیں جو ہمارے ملک میں سندھو دیش ، آزاد پشتونستان اور بلوچستان کو پاکستان سے الگ کرنا چاہتے ہیں ۔یہ لوگ بہت سفاک ہیں ان کا دین ایمان صرف پیسہ ہے انکا پیسہ جائیدادیں سب باہر کے ممالک میں ہیں ۔اگر خدا نا کرے ملک میں حالات خراب ہو یہ سب سے پہلی فلائٹ لے کر ملک سے بھاگ جائیں ۔اپنی کرپشن سے جمع کردا دولت پر انجوائے کریں گے اور مسائل میں گھیرئ عوام کے لئے مگرمچھ کے آنسو بہائیں گے۔اس لئے عوام انکی بات پر کان نا دھریں یہ موروثی سیاست چاہتے ہی یہ ہیں عوام غریب اور ناخواندہ رہیں اور یہ ان پر حکومت کرتے رہیں ۔آج کل احتساب کے نرغے میں ہیں تو چیخیں مارتے ہوئے بار بار 71 اور بنگلہ دیش انکی زبان پر آجاتا ہے ۔ان کے خلاف سخت کاروائی ہونی چاہے انکی وفاداری ریاست پاکستان نہیں صرف پیسے کے ساتھ ہے ۔

تاہم پاکستان کے عوام باشعور ہیں وہ اب 71 نہیں 2019 کے دور میں جی رہے ہیں اور پاکستان کے خلاف سازشوں کو سمجھ رہے ہیں ۔وہ کسی ایسی لسانی تنظیم کو سپورٹ نہیں کررہے جو پاکستان کو توڑنے کی بات کرے اور خود کو پاکستانی کہنے میں عار  محسوس کرے۔ہم ہماری قومیت کو لے کر تذبذب کا شکار نہیں میں پاکستانی ہو اور پاکستانی رہو گی۔

وہ تمام طبقہ جو پاکستان میں سیاست دانوں کی کرپشن کو سپورٹ کرتا ہے وہ ہی اس  پاکستان توڑنے کے فتنے پی ٹی ایم کو سپورٹ کررہا ہے۔تاہم وہ اپنی سازشوں میں کامیاب نہیں ہوگے۔27 فروری 2019 کو تاریخ گواہ ہے پاکستان کی فوج نے فضاء، زمین ،پانیوں اور انفارمیشن کی وار میں دشمن کو بری طرح شکست دی۔اس ہی طرح کراچی کو الگ ملک بنانے والو شکست دی۔بلوچستان میں بی ایل اے اور راء کے نیٹ ورک کو توڑا ۔بھارتی جاسوس کل بھوشن کو گرفتار کیا۔اس ہی طرح پی ٹی ایم کے فتنے کو پھیلنے سے پہلے بھانپ لیا گیا۔یہ کوئی پشتونوں کے حقوق کی تنظیم نہیں ہے۔ان کا قبلہ اور وفاداری صرف این ڈی ایس اور راء کے ساتھ ہے۔

 انکے دو لوگ منتخب ہوکر اسمبلی آگئے ریاست نے اتنا بڑا دل کیا پھر بھی یہ سڑکوں پر خون خرابہ چاہتے ہیں ۔اسمبلی کے ہال میں پشتونوں کے لئے جہدوجہد کرتے لیکن یہ تو ایجنڈا ہے ہی نہیں ۔

 جب دھرتی ماں پر حملہ ہو تو ماں کے سعادت مند بیٹے اس کے دفاع میں آئیں گے۔ دھرتی ماں کو چاہئے بگڑی ہوئی ناخلف اولاد کو آئین کے مطابق سرزنش کرے ۔جن سب کو مجیب اور حسینہ بننے کا شوق چڑھ گیا ہے ان کو اس ہی طرح ڈیل کیا جایا جس طرح گھر میں نقب لگانے والے کے ساتھ کیا جاتا ہے۔

ہم خوش قسمت ہیں کہ ہم ایٹمی طاقت ہیں اور ہمارے پاس ایک طاقت ور فوج  موجود ہے۔دشمن نے یہ بھانپ لیا ہے انکو میدان جنگ میں ہاریا نہیں جاسکتا تو اس نے چال کا رخ بدل کر دھرتی ماں کے ناخلف بیٹوں کو خرید کر نئ چال چلی لیکن اس میں بھی ناکامی انکا مقدر بنی۔انہوں نے وردی کے خلاف نعرے لگوائے تو اس جواب میں کچھ یوں میں نے پاکستانیوں کے دل کا حال رقم کیا 

‏امن و امان وردی سے ہے

دشمن پر ہیبت وردی سے ہے

پاکستان کی سالمیت وردی سے ہے

چہروں پر سکون وردی سے ہے

پاکستان کا دفاع وردی سے ہے 

جوانوں کی شان وردی سے ہے

ماوں کا مان وردی سے ہے

پرامن جو یہ سوہنی دھرتی ہے 

اس کے پیچھے وردی ہے

جویریہ صدیق 

 

 



متعللقہ خبریں