ایکواڈور   گنی  میں پہلے  ماربرگ وائرس  کی تصدیق ہو گئی

پاسچر انسٹی ٹیوٹ میں جانچے گئے 8 نمونوں میں سے ایک کا ٹیسٹ مثبت آیا

1946265
ایکواڈور   گنی  میں پہلے  ماربرگ وائرس  کی تصدیق ہو گئی

ایکواڈور   گنی  میں پہلے  ماربرگ وائرس  کی تصدیق ہو گئی ہے۔

 ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے تحریری بیان کے مطابق، ملک کی مغربی ریاست Kie-Ntem میں کم از کم 9 افراد کی موت کے بعد کیے گئے ابتدائی ٹیسٹوں میں وائرل ہیمرجک فیور مثبت آیا ہے۔

صحت کے حکام نے، ڈبلیو ایچ او کی مدد سے 7 فروری کو ایک ضلعی ہیلتھ سنٹر  کی وارننگ کے بعد سینیگال میں پاسچر انسٹی ٹیوٹ کی ریفرنس لیبارٹری کو نمونے بھیجے تاکہ بیماری کی وجہ کا تعین کیا جا سکے۔

پاسچر انسٹی ٹیوٹ میں جانچے گئے 8 نمونوں میں سے ایک کا ٹیسٹ مثبت آیا، جب کہ اب تک بخار، تھکاوٹ، خونی الٹی اور اسہال جیسی علامات کے ساتھ 9 اموات اور 16 مشتبہ کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔

 ملک میں اضافی تحقیقات جاری ہیں تو  مریضوں سے تعلق کاجائزہ لینے ، ان کو آئی سو لیٹ کرنے  اور بیماری کی علامات ظاہر کرنے والوں کو طبی امداد فراہم کرنے کے لیے   ہیلتھ ٹیمیں روانہ کر دی  گئی ہیں۔

ماربرگ وائرس، جسے ایبولا کا ہی ایک دوسرا ورژن تصور کیا جاتا ہے، پہلی بار 1967 میں جرمنی کے شہر ماربرگ کی ایک لیبارٹری میں اس کا تعین ہوا تھا۔

ماربرگ وائرس، جو پھلوں کے چمگادڑوں کے ذریعے منتقل ہوتا ہے، جسمانی رطوبتوں یا متاثرہ افراد کے رابطے کے ذریعے انسانوں میں پھیلتا ہے۔

متاثرہ افراد میں تیز بخار، شدید سر درد، کمزوری اور قے جیسی علامات اچانک ظاہر ہوتی ہیں، اور بہت سے مریضوں میں 7 دن کے اندر شدید ہیمرج کی علامات ظاہر ہوتی ہیں۔

ماربرگ وائرس کی شرح اموات، جس کی کوئی ویکسین یا کوئی خاص علاج نہیں ہے، 23 فیصد اور 90 فیصد کے درمیان   ہے۔



متعللقہ خبریں