امریکہ ماحولیات سے متعلق پیرس معاہدے سے نکل گیا

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے ٹرمپ کے 2017 کے اس اعلان پر زور دیا  کہ جس میں امریکی صدر کا کہنا تھا کہ پیرس معاہدہ امریکہ پرایک ظالمانہ اقتصادی بوجھ ہے جس سےنکلنا ضروری ہے

امریکہ ماحولیات سے متعلق پیرس معاہدے سے نکل گیا

امریکہ  نے  گزشتہ روز اقوام متحدہ کو سرکاری طور پر آگاہ کر دیا کہ وہ ماحولیات سے متعلق پیرس معاہدے سے نکل گیا ہے۔

 اس لحاظ  سے  امریکہ اس ماحولیاتی معاہدے سے دست بردار ہونے والی واحد اقتصادی قوت ہے۔

واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ ماحولیاتی تبدیلی اور اس کے اثرات کی حقیقت سے متعلق بڑھتے ہوئے شواہد کے باوجود مذکورہ معاہدے سے دست برداری کی سمت قدم بڑھاتے رہے۔

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے ٹرمپ کے 2017 کے اس اعلان پر زور دیا  کہ جس میں امریکی صدر کا کہنا تھا کہ پیرس معاہدہ امریکہ  پر  ایک ظالمانہ اقتصادی بوجھ ہے۔

پومپیو نے ایک بیان میں کہا کہ امریکہ توانائی کے عالمی مرکب کو پیش نظر رکھ کر توانائی کے تمام وسائل اور ٹیکنالوجی کو صاف اور شفاف طریقے سے استعمال میں لا رہا ہے اس میں حفری ایندھن، جوہری توانائی اور قابل تجدید توانائی شامل ہے۔

امریکی سینیٹ میں خارجہ امور کی کمیٹی میں ڈیموکریٹس کے لیڈر روبرٹ میننڈیز کا کہنا ہے کہ  ٹرمپ انتظامیہ نے ایک بار پھر ہمارے حلیف ممالک کو ہلا کر رکھ دیا ہے  جبکہ  اس نے حقائق سے   نظر چراتے ہوئے  دنیا کو درپیش سب سے بڑے ماحولیاتی چیلنج کو اپنی سیاست سے بھی  آلودہ کر دیا ہے ۔

 



متعللقہ خبریں