یورپی یونین نے ایرانی شخصیات و کمپنیوں پر نئی پابندیاں لگا دیں

یورپی یونین نے گزشتہ سال ستمبر میں مہسا امینی کی زیر حراست موت کے بعد ملک بھر میں ہونے والے مظاہروں میں تشدد کی اجازت دینے کے جواز میں اٹھارہ ایرانی باشندوں اور انیس اداروں پر پابندیاں لگا دی ہیں

1936849
یورپی یونین نے ایرانی شخصیات و کمپنیوں پر نئی پابندیاں لگا دیں

یورپی یونین نے گزشتہ سال ستمبر میں مہسا امینی کی زیر حراست موت کے بعد ملک بھر میں ہونے والے مظاہروں میں تشدد کی اجازت دینے کے جواز میں اٹھارہ ایرانی باشندوں اور انیس اداروں پر پابندیاں لگا دی ہیں۔

 یورپی یونین کونسل کے مطابق،ان پابندیوں کو ایران میں حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں کے پیش نظر لگایا گیا ہے۔

 پابندیوں کے حامل افراد میں ایرانی وزیر کھیل سید حامد ہزاوہ سجادی ،بعض ارکان پارلیمان،بعض صوبائی گورنرز،سرکاری میڈیا کے ملازمین اور پاسداران انقلاب کے بعض اعلی عہدےدار شامل ہیں ، علاوہ ازیں اس فہرست میں ایران کی خصوصی پولیس فورس اور دیگر سلامتی سے متعلق خدمات دینے والی بعض کمپنیوں کے نام بھی درج ہیں۔

حالیہ اعلان کے بعد یورپی یونین کی جانب سے  پابندیوں کی زد میں آنے والی ایرانی شخصیات کی تعداد ایک سو چونسٹھ اور اداروں کی تعداد اکتیس ہو چکی ہے ۔

 ان پابندیوں میں یورپ کی سیاحت،اثاثوں کو منجمد کرنا اور متعلقہ افراد و کمپنیوں کو فنڈ کی فراہمی روکنا شامل ہے جبکہ عوام کے خلاف استعمال کیے جانے والے بعض آلات اور ڈیٹیکٹرز کی فروخت بھی ایران کےلیے ممنوعہ قرار دی گئی ہے ۔

 

 



متعللقہ خبریں