فرانس کے نان بائی سڑکوں پر نکل آئے

نیشن اسکوائر میں جمع تقریباً ایک ہزار مظاہرین نے وزارتِ اقتصادیات کی عمارت تک احتجاجی مارچ کی اور دھرنا دیا

1937032
فرانس کے نان بائی سڑکوں پر نکل آئے

فرانس کے نان بائی، انرجی کے بھاری نرخوں کے خلاف احتجاج کے لئے سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔

نیشن اسکوائر میں جمع تقریباً ایک ہزار مظاہرین نے وزارتِ اقتصادیات کی عمارت تک احتجاجی مارچ کی۔

مظاہرین نے ہاتھوں میں فرانس کی روایتی روٹی 'بگٹ'، قومی پرچم  اور "پیشہ ور طبقہ افراطِ زر کے نیچے پِس رہا ہے"، "بگٹ یونیسکو میں" اور "نان بائی  ناک آوٹ " کی تحریروں والے بینر اُٹھا رکھے تھے۔

مظاہرین  نے  "نان بائی خطرے میں" کے نعرے بھی لگائے اور  اپیل کی ہے کہ توانائی کے نرخوں میں 'قیمتوں کی زیادہ سے زیادہ ثابت حد' کا اطلاق کیا جائے۔

بعد ازاں مظاہرین نے وزارت اقتصادت کی عمارت کے پاس دھرنا دیا۔

واضح رہے کہ فرانس حکومت نے انرجی بحران کی وجہ سے بھاری بِلوں سے متاثرہ سیکٹروں  کو بِل امداد دینے کے ساتھ ساتھ  ٹیکسوں  کی ادائیگی میں التوا  جیسی سہولیات کے بارے میں  بھی کاروائیاں جاری ہونے کا اعلان کیا تھا۔

وزیر اعظم الزبتھ بورن نے کہا تھا کہ ہم،  نان بائیوں پر نقد ادائیگیوں کا بوجھ  کم کرنے کے لئے کام کر رہے ہیں۔ کاروائیاں مکمل ہونے کی صورت میں  نان بائی رواں سال کے بجلی کے پہلے  بِلوں اور دیگر سماجی ادائیگوں کو  قسطوں کی شکل میں سال کے آخر تک تھوڑا تھوڑا کر کے ادا کر سکیں گے۔



متعللقہ خبریں