امریکہ اور خلیجی ریاستوں نے لبنانی حزب اللہ اور ایران کی25 کمپنیوں پرپابندیاں لگا دیں

امریکہ اور6 دوسری خلیجی ریاستوں نے گزشتہ روز سپاہ پاسداران انقلاب اور لبنانی ملیشیا حزب اللہ سے وابستہ  کم ازکم 25 کمپنیوں اور مالیاتی اداروں پر پابندیوں کا اعلان کیا ہے۔

امریکہ اور خلیجی ریاستوں نے لبنانی حزب اللہ اور ایران کی25 کمپنیوں پرپابندیاں لگا دیں

امریکہ اور6 دوسری خلیجی ریاستوں نے گزشتہ روز سپاہ پاسداران انقلاب اور لبنانی ملیشیا حزب اللہ سے وابستہ  کم ازکم 25 کمپنیوں اور مالیاتی اداروں پر پابندیوں کا اعلان کیا ہے۔

 ان پابندیوں کا مقصد دونوں تنظیموں کے مالی اثاثے منجمد کرنا ہے۔

پابندیوں کا فیصلہ الریاض میں قائم دہشت گردی کے لئے رقوم فراہمی کو ہدف بنانے والے مرکز نے کیا تھا۔

 واضح رہے کہ  یہ ادارہ دو برس قبل تشکیل دیا گیا جس میں سعودی عرب سمیت بحرین، کویت، عُمان، قطر، متحدہ عرب امارات اور امریکہ شامل ہیں۔

پابندیوں کا نشانہ بننے والی کمپنیاں سپاہ پاسداران انقلاب کے ذیلی ادارے باسیج مزاحمتی  قوت  کو مالی تعاون فراہم کرتی ہیں۔

 امریکی وزارت خزانہ کے مطابق باسیج ملیشیا پرتشدد کارروائیوں کے ذریعے مقامی حزب اختلاف کو دباؤ میں لانے کے ساتھ ساتھ علاقائی تنازعات میں جنگجو بھیجنے کا کام سرانجام دیتی ہے۔

پابندیوں کی زد میں آنے والی 25 کمپنیوں اور مالیاتی اداروں میں باسیج ملیشیا کو مالی مدد وتعاون فراہم کرنے والے ایرانی ملت بنک، کان کنی ادارے اور سرمایہ کاری فرمیں شامل ہیں۔

پابندیوں نشانہ بننے والے چار افراد ایسے ہیں جو عراق میں حزب اللہ کے آپریشن چلاتے ہیں۔

 یاد رہے کہ یہ  تمام 25 کمپنیاں وہ ہیں جنہیں امریکی محکمہ  خزانہ نے 2018 میں پابندیوں کا نشانہ بنایا تھا۔



متعللقہ خبریں