پاکستان میں انقلابی نوعیت کی اصلاحات

عمران خان، ہ قومیں تباہ ہوجاتی ہیں جہاں بڑے چور ایوانوں میں پھریں، لندن چلے جائیں اور بڑے بڑے گھروں میں رہیں

1364106
پاکستان میں انقلابی نوعیت کی اصلاحات

وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے صوبہ پنجاب کے علاقے لیہ میں احساس آمدن پروگرام کا افتتاح کیا۔ اس موقع  پر منعقدہ  تقریب سے  خطاب  کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ  ہماری پوری  کوشش ہے  کہ پاکستان کوایک  فلاحی ریاست  کی سطح تک لایا جائے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ اب تک  ملک میں جتنی بھی ترقی ہوئی اس سے امیر امیر اور غریب غریب تر ہوگیا، دونوں میں فاصلہ بڑھتا گیا، امیر اور غریب میں  نمایاں فرق ہونے والے معاشرے آگے نہیں بڑھتے۔

وزیراعظم نے کہا کہ یہ "احساس پروگرام" غرباء کے لیے تشکیل دیا جا رہا ہے۔  کفالت کارڈ کے ذریعے ان کی زندگی میں بہتری لانے کی سعی کی جا رہی ہے۔  اس پروگرام کے تحت کمزور طبقے کو وسائل  فراہم کیے جائیں گے تاکہ وہ اپنی بہتر طریقے سے کفالت کرسکیں، ہر ماہ  80 ہزار ضرورت مند شہریوں کو  بلاسود قرضے دیئے جائیں گے، 50 ہزاروظیفے دیے جائیں گے، سڑکوں پر سونے والے بے گھر افراد کے لیے پناہ گاہیں بنا رہے ہیں جو ملک میں ہرجگہ ہوں گی، 180 پناہ گاہیں بن چکی ہیں، ہماری کوشش ہے کہ کوئی بھی عام آدمی سڑکوں میں بسیرا نہ کرے ۔

انہوں نے بتایا  کہ سرکاری سمیت تمام اسکولوں میں یکساں نصاب  تشکیل دینے پر کام  ہو  رہا ہے ، 70 سالوں میں تعلیم کا نظام جو بگڑا ہے اس کو ٹھیک کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ پولیس کے محکمہ کو بھی بہتر بنارہے ہیں، وہ قومیں تباہ ہوجاتی ہیں جہاں بڑے چور ایوانوں میں پھریں، لندن چلے جائیں اور بڑے بڑے گھروں میں رہیں لیکن چھوٹے چورپکڑے جائیں، میں نے آئی جی پنجاب پولیس کو چھوٹے بدمعاشوں کی بجائے بڑے بدمعاشوں کو پکڑنے کا حکم دیا ہے، پولیس بڑے ڈاکوؤں کو جیل میں ڈالے چھوٹے خود ٹھیک ہوجائیں گے۔

وزیر اعظم نے مزید کہا  کہ ملک مشکل وقت سے نکل رہا ہے لیکن آگے آسان زندگی نہیں اور بڑے بڑے چیلنجز درپیش ہیں، ملک کا خسارہ 75 فیصد کم ہوا، روپیہ بھی مستحکم ہوا ، ملک اب صراط مستقیم پر قائم دائم ہے  اور مستقبل قریب میں عوام  خوشحالی سے ہمکنار ہو ں گے۔

 



متعللقہ خبریں