اگر دنیا نے چپ سادھی رکھی تو پاک وہند نکلیئر جنگ چھڑسکتی ہے، سفیرِ پاکستان انقرہ

"تنازعہ جموں و کشمیر:حالیہ بحران سے علاقائی امن و سلامتی کو خطرات" کے زیرِ عنوان ایک خصوصی پینل سے خطاب

اگر دنیا نے چپ سادھی رکھی تو پاک وہند نکلیئر جنگ چھڑسکتی ہے، سفیرِ پاکستان انقرہ

پاکستان  کے انقرہ میں سفیر محمد سائرس سجاد قاضی  کا کہنا ہے کہ  بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو دنیا کی بڑی ترین  کھلے آسمان تلے کی کسی  جیل میں بدل کر رکھ دیا ہے۔

سفیر پاکستان  نے دارالحکومت انقرہ میں سٹریٹیجک  تھاٹ انسٹیٹیوٹ کے زیر ِ اہتمام "تنازعہ جموں و کشمیر:حالیہ بحران سے علاقائی امن و سلامتی کو خطرات" کے زیرِ عنوان ایک خصوصی پینل سے خطاب کیا۔

دنیا  کے سنگین ترین انسانی بحرانوں میں سے ایک کےمقبوضہ کشمیر میں پیش ہونے پر زور دینے والے   سفیر  کا کہنا تھا یہ بحران عالمی برادری کی نظروں کے سامنے کھلم کھلا پیدا کیا گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ "ہم سب 'عالمی تاریخ' میں آہنی پردے کے شاہد ہیں، کشمیر میں بھی 'زعفران پردے' کا ماحول پیدا کیا  گیا ہے، مقبوضہ جموں و کشمیر  اس وقت  دنیا  کے بڑے ترین نظر بند کیمپ کی ماہیت کا حامل ہے۔ "

انہوں نے کہا کہ جیسا ماحول فلسطین کے خلاف قائم کیا گیا ہے اسی طرح   کا ماحول کشمیر میں قائم کیا جا رہا ہے، 'عالمی میدان میں قبول کردہ اس مسئلے کو حل کیے بغیر چھوڑنا ، دونوں ملکوں کے مابین جنگیں چھڑ سکنے  کے ماحول کو جنم دے رہا ہے۔ '

جموں و کشمیر کے عوام کو اپنے مستقبل  فیصلہ خود کرنے کی اجازت دینے کی ضرورت پر زور دینے والے جناب قاضی نے اس بات کی یاد دہانی کرائی کہ ہندوستان  کی علاقے میں غیر انسانی کاروائیاں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے بھی منافی ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ"اگر دنیا  بھارت کی جموں و کشمیر میں جارحیت کے سامنے خاموش تماشائی بننے کے عمل کو جاری رکھتی ہے تو  اس صورت میں دو طرفہ طور پر نکلیئر جنگ  چھڑنے کا ماحول پیدا ہو جائیگا" لہذا عالمی برادری کو اس معاملے میں اپنی ذمہ داریاں پوری کرنی ہوں گی۔

 



متعللقہ خبریں