پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کے ساتھ مل کر نئے میثاقِ جمہوریت کو طے کرنے کے لیے تیارہیں: بلاول بھٹو

بلاول بھٹو کے بیان پر ن لیگ نے بلاول کی اس تجویزکا خیر مقدم کیا گیا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ جمہوری استحکام کیلئے ہر طرح کے ڈائیلاگ پر تیار ہیں، ہمارا مقصد شفاف الیکشن یقینی بنانا ہے

پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کے ساتھ مل کر نئے میثاقِ جمہوریت کو طے کرنے کے لیے تیارہیں: بلاول بھٹو

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ تمام جمہوری جماعتوں سے نئے میثاق جمہوریت پر بات کرنے کےلئے تیار ہیں۔

انہوں نے  ان خیالات کا اظہار    پارٹی رہنماوں کے ہمراہ  میڈیا  سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔

ادھر بلاول بھٹو کے بیان پر ن لیگ کا جواب بھی آ گیا ہے اور ان کی تجویز کا خیر مقدم کیا گیا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ جمہوری استحکام کیلئے ہر طرح کے ڈائیلاگ پر تیار ہیں، ہمارا مقصد شفاف الیکشن یقینی بنانا ہے۔ مریم اورنگزیب کا یہ بھی کہنا تھا کہ چاہتے ہیں الیکشن کی شفافیت پر سوال نہ اٹھے۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ میں آنے والے سیاسی قائدین بنیادی اصولوں پر سمجھوتہ نہ کریں ،جو ظلم و زیادتی میرے والد نے نوازشریف کے دور میں سہی، نہیں چاہتا وہی سب شریف خاندان کے ساتھ ہو ، عوام میں بی بی شہید کا مشن لے کر نکلا ہوں ، محنت سے نہیں ڈرتا، نتائج کےلئے محنت ضروری ہے، گالم گلوچ کی سیاست ، گالم  گلوچ بریگیڈ کی سیاست پاکستان برداشت نہیں کرسکتا۔

 بلاول بھٹو زر داری نے کہا کہ عوام پیپلزپارٹی کا نظریہ قبول کرتے ہیں، اس کا نتیجہ 25 جولائی کو سامنے آئےگا، ، نوجوانوں کو یہ پیغام دینا چاہتا ہوں کہ مثبت کردار ادا کریں۔

بلاول بھٹو زر داری نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی حکومتوں نے ریاست اور معیشت کو مستحکم کیا، پی پی پی ملک کی وہ سیاسی جماعت ہے جو تمام مسائل کا سامنا کرسکتی ہے۔بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ سندھ میں سیاسی اتحاد حقیقی خطرہ ہوتا تو سامنے آکر مقابلہ کرتا، سندھ میں سیاسی اتحاد بیک ڈور کے ذریعے کام نہیں کرتا، اب بھی کچھ کٹھ پتلی جماعتیں 2018 ءکی آئی جے آئی کا حصہ ہیں۔ایک سوال پر انہوں نے کہاکہ نواز شریف اور شہباز شریف کےساتھ ماضی کا ہمارا تجربہ مثبت نہیں رہا ،مسلم لیگ (ن)،نوازشریف اور شہباز شریف نے میثاق جمہوریت پر اعتماد کھویا،ہم جمہوریت پسند تمام جماعتوں سے وسیع تر میثاق جمہوریت پر بات کےلئے تیار ہیں، ضرورت پڑی تو پارلیمنٹ میں آنے والی تمام جمہوریت پسند جماعتوں کے اتفاق رائے کی کوشش بھی کریں گے ، ہم کسی صورت بنیادی حقوق پر سمجھوتہ نہیں کریں گے، نواز شریف کو جیل میں بنیادی سہولیات فراہم کی جانی چاہئیں۔

بلاول بھٹو نے واضح کیا کہ فاشٹ ذہنیت کے حامل سیاستدانوں کی تعلیمات سے ملک کا ٹیلنٹ ضائع ہو جائےگا۔بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ میری توجہ پارٹی منشور اور عوامی مسائل پر ہے، خود بھی پارلیمنٹ میں ہوں گا اور پیپلز پارٹی کے نمائندے بھی ہوں گے۔



متعللقہ خبریں