پاکستان میں سیاستدانوں کو بھی کسی جج اور جرنیل کی طرح عزت دی جانی چاہیے، وزیر اعظم

پانچ سالہ دورانیہ حکومت کے بعد  صرف سیاست دان کا احتساب ہوتا ہے   ناکہ کسی دوسرے کا،

964419
پاکستان میں سیاستدانوں کو بھی کسی جج اور جرنیل کی طرح عزت دی جانی چاہیے، وزیر اعظم

وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ جتنی عزت ایک جج، جرنیل اور سرکاری افسر کی ہے اتنی ہی عزت سیاست دان کی بھی ہونی چاہیے۔

وزیر اعظم  نے یہ اعلان  سیالکوٹ پسرور سڑک کو 2 رویہ کرنے کا سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب سے خطاب  کے دوران کہی۔

انہوں نے واضح کیا کہ فیض آباد دھرنے کے دوران وزیر قانون زاہد حامد نے استعفیٰ دیا حالانکہ ان کا اس معاملے سے کوئی تعلق نہیں تھا، اس عمل سے باز رکھنے کی ہماری کوشش کے باوجود انہوں نے  مستعفی ہوتے ہوئے  شرافت اور خدمت کی سیاست کا معیار قائم کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ جس ملک میں سیاست دان کی عزت نہیں ہوگی وہ ترقی نہیں کرسکتا، جتنی ایک جج، جرنیل، اور حکومتی اہلکار کی عزت ہے اتنی ہی سیاست دان کی بھی عزت ہونی چاہیے، ملک چلانے اور معاملات کو حل کرنے کا  کام سیاستدانوں کو ہی سونپا جاتا ہے ، ہم نے عدالتی فیصلے قبول کیے اور  آٓنکھوں پر رکھے لیکن تاریخ اور عوام ایسے فیصلے قبول نہیں کرتے اور انہیں مسترد کردیتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ شیشے کے گھر میں سیاست دان رہتا ہے، وہ سب کچھ برداشت کرتا ہے اور ملک کی خدمت کرتا ہے،  پانچ سالہ دورانیہ حکومت کے بعد  صرف سیاست دان کا احتساب ہوتا ہے   ناکہ کسی دوسرے کا، ملک کی ترقی کا  راز اسی میں پوشیدہ ہے  اور وہ   ووٹ کو اور سیاست دان کو عزت دینے پر مبنی ہے۔

شاہد خاقان عباسی نے مزید کہا کہ اس عہدے پر آنے کے بعد کے 8 ماہ کے عرصے میں   میں   نے اربوں روپے خرچ کیے جانے والے منصوبوں کا افتتاح کیا ہے۔

20، 30 سال سے زیر التوا منصوبے مکمل کیے، ماضی میں اس کی کوئی مثال نہیں ملتی، تقریریں کرنے والوں نے 5 سال گزرنے کے بعد 11 نکات پیش کردیے، ہم نے نکات پیش نہیں کیے بلکہ کام کیا، ن لیگ کو کسی نکات کی ضرورت نہیں کیونکہ ہم کام کی بنیاد پر کھڑے ہیں، صرف ن ہی لیگ ملک کا درد رکھتی ہے۔

 



متعللقہ خبریں