اگر کرپٹ وزیراعظم عہدے پر برقرار رہا تو ملکی سلامتی خطرے میں پڑجائے گی: عمران خان

عمران خان نے کہا کہ مشترکہ تحقیقاتی ٹیم پر حملے کیے جارہے ہیں، جے آئی ٹی پر تنقید کا مطلب سپریم کورٹ پر تنقید ہے، حکومت نے عدلیہ پر حملہ کرنے کی کوشش کی تو میری ایک کال پر پورا پاکستان باہر نکل آئے گا

761123
اگر کرپٹ وزیراعظم عہدے پر برقرار رہا تو ملکی سلامتی خطرے میں پڑجائے گی: عمران خان

پاکستان تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان نے کہا ہے کہ اگر کرپٹ وزیراعظم عہدے پر برقرار رہا تو ملکی سلامتی خطرے میں پڑجائے گی۔

اسلام آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ مشترکہ تحقیقاتی ٹیم پر حملے کیے جارہے ہیں، جے آئی ٹی پر تنقید کا مطلب سپریم کورٹ پر تنقید ہے، حکومت نے عدلیہ پر حملہ کرنے کی کوشش کی تو میری ایک کال پر پورا پاکستان باہر نکل آئے گا، لوگ خاموشی سے فیصلے کا انتظار کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے خلاف کریمنل انویسٹی گیشن ہو رہی ہے ،جے آئی ٹی کے آنے والے فیصلے کی قوم کو پیشگی مبارکباد دیتا ہوں، سب سے زیادہ کرپشن شریف برادران نے کی ، منی لانڈرنگ روک دیں تو یہاں لوگوں کو نوکریاں دی جا سکتی ہیں، پاکستان سے سالانہ 10 ارب ڈالرز کی منی لانڈرنگ ہوتی ہے

چیرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ نواز شریف منی لانڈرنگ کے ملزم ہیں جن کے خلاف فوجداری تحقیقات ہورہی ہیں جو کرپشن سے زیادہ سنگین جرم ہے، نواز شریف جے آئی ٹی میں 13 سوالات میں سے ایک کا بھی جواب دینے میں بھی ناکام ہوگئے، الٹا کہہ رہے ہیں کہ جے آئی ٹی میرے سوالات کا جواب نہیں دے رہی۔

 عمران خان نے کہا کہ 70 سال میں سب سے زیادہ کرپشن شریف برادران نے کی ہے، 21 سال اقتدار میں رہے ایک ادارہ ٹھیک نہیں کیا، بجلی صرف اشتہارات میں بنائی جاتی ہے، پی ٹی آئی نے چند سال میں خیبرپختون خوا میں پولیس کو ماڈل پولیس بنادیا، لیکن شریف برادران اور ان کے بچے صرف پیسہ بنانے میں لگے ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ حکومت اداروں کو خریدنے میں ناکام ہوگئی تو سازش کا الزام لگادیا، فوج اور سپریم کورٹ پر انگلیاں اٹھائی جانے لگیں، کرپٹ وزیراعظم نواز شریف عہدے پر برقرار رہے تو ملکی سلامتی خطرے میں پڑجائے گی۔

 پی ٹی آئی چیرمین نے  سانحہ احمد پور شرقیہ کو انتہائی افسوس ناک واقعہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ پورے پنجاب میں ایک بھی برن سنٹر نہیں جس کی ذمہ داری کس پر عائد ہوتی ہے؟۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ بڑے ترقیاتی منصوبوں کا مقصد کمیشن بنانا ہے، بنیادی سہولیات پر پیسہ خرچ نہیں کیا جارہا، نواز شریف کا بیرونی دوروں کا یومیہ خرچہ 27 لاکھ روپے ہے، لیکن ان دوروں سے پاکستانیوں کو کیا ملتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جب پہلی دفعہ طاقتور قانون کے نیچے آئے گا تو نیا پاکستان بنے گا ،نیا پاکستان پل اور سڑکیں بنانے سے نہیں ملک میں انصاف کا نظام آنے سے بنے گا۔



متعللقہ خبریں