مصری پارلیمنٹ کے لیبیا میں مداخلت کے فیصلے پر لیبیا کا شدید رد عمل

لیبیا ئی وزیر داخلہ فتح باش آغا نے  مصری پارلیمنٹ کے الا سیسی کو ’’لیبیا میں مداخلت‘‘ کے اختیارات  کو ’’اعلانِ جنگ ‘‘ سے تعبیر کیا

1459603
مصری پارلیمنٹ کے لیبیا میں مداخلت کے فیصلے پر لیبیا کا شدید رد عمل

لیبیا ئی پارلیمنٹ نے مصری صدر عبدالفتح الا سیسی کو ’’لیبیا میں مداخلت‘‘ کے اختیارات دینے والے بل کی منظوری دینے  والی مصری پارلیمنٹ   کے خلاف رد عمل کا مظاہرہ کیا ہے۔

دارالحکومت طرابلس کی لیبیا پارلیمنٹ نے تحریری بیان میں کہا ہے کہ ’’ہم مصری پارلیمنٹ  کے توبرق ایوان نمائندگان اور لیبیائی قبیلو ں کی نمائندگی کرنے  کا دعوی کردہ ایک غیر قانونی درخواست پر مبنی اس فیصلے کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہیں۔‘‘

مصری  قومی اسمبلی کے مذکورہ فیصلے کی فوری طور پر مذمت  کرنے کی اپیل کرنے والے اس اعلامیہ میں لیبیا  حکومت سے ’اس دھمکی کا سیاسی عملی طور پر جواب دینے کے لیے تیار رہنے اور مناسب رد عمل  کا مظاہرہ کرنے کے  زیر مقصد ہر ممکنہ متبادلوں پر غور کرنے ‘‘ کی بھی درخواست کی گئی ہے۔

اعلامیہ میں  واضح کیا گیا ہے کہ لیبیا ، مصر  کی قومی سلامتی کے لیے خطرہ تشکیل نہیں دیتا لہذا مصری اسمبلی کو مداخلت کرنے کی دھمکیاں بلا جواز ہیں۔

لیبیا ئی وزیر داخلہ فتح باش آغا نے  مصری پارلیمنٹ کے الا سیسی کو ’’لیبیا میں مداخلت‘‘ کے اختیارات  کو ’’اعلانِ جنگ ‘‘ سے تعبیر کیا ہے۔

فتح باش آغا نے ٹویٹر  پر لکھا ہے کہ مصری پارلیمنٹ  کی مسلح قوتوں کو مغربی سرحدوں  یعنی لیبیا کی جانب روانہ کرنے   کی منظوری لیبیا کے خلاف اعلانِ جنگ کا مفہوم رکھتی ہے اور یہ عرب لیگ و اقوام متحدہ معاہدوں کی خلاف ورزی ہے۔

ہماری سرحدوں  کے اندر کسی غیر ملکی قوتوں کو ہم دشمن مانیں گے۔ ہم اپنی قوم کی حاکمیت، سلامتی اور حریت کا دفاع کرنے  میں تردد سے کام نہ لینے کا اعلان کرتے  ہیں۔

 



متعللقہ خبریں