عراق میں پر تشدد واقعات میں مزید 23 افراد ہلاک، سینکڑوں زخمی

عراقی عوام بے روز گاری، بد عنوانیوں اور سرکاری خدمات کے فقدان کے خلاف ملک کے مختلف علاقوں میں ایک عرصے سے مظاہرے کرتے چلے آرہے ہیں

عراق میں پر تشدد واقعات میں مزید 23 افراد ہلاک، سینکڑوں زخمی

عراقی دارالحکومت بغداد اور اس کے جنوبی شہروں میں  حکومت مخالف مظاہروں اور حکومت کی ان کے خلاف شدید مداخلت سے حالیہ 5 دنوں میں 23 افراد ہلاک ہو گئے۔

عراقی خود مختار انسانی حقوق کے اعلی کمیشن نے ایک تحریری اعلان میں واضح کیا ہے کہ 3 تا 7 نومبر کو بغداد، کربلا، بصرہ اور زیکار میں مظاہروں  کے دوران پر تشدد واقعات  میں 23 افراد جان بحق جبکہ 1077 زخمی ہوئے ہیں۔

اعلان کے مطابق پولیس  نے اس دورانیہ میں 201 افراد کو زیر حراست لیا جن  میں سے 170 کو آزاد کر دیا گیا۔

بصرہ شہر میں مظاہرے کے خلاف پولیس کی مداخلت سے دو مظاہرین ہلاک ہو گئے۔

بصرہ کے ادارہ صحت  کے ایک افسر نے اپنا نام خفیہ رکھنے کی شرط پر بتایا ہے کہ شہر کے مختلف اسپتالوں میں  دو افراد کی نعشیں اور درجنوں زخمی  موجود ہیں، ہلاک اور زخمی  ہونے والوں کو اصلی گولیاں لگی ہیں جبکہ  آنسو گیس سے متاثرہ افراد کو سانس لینے میں سخت دشواری کا سامنا ہے۔

خیال رہے کہ عراقی عوام بے روز گاری، بد عنوانیوں اور سرکاری خدمات کے فقدان کے خلاف ملک کے مختلف علاقوں میں ایک عرصے سے مظاہرے کرتے چلے آرہے ہیں۔



متعللقہ خبریں