ادلب کی آواز ہمیشہ کے لئے چُپ ہو گئی

ترکی کی اناطولیہ خبر رساں ایجنسی کے لئے آزاد رپورٹنگ کرنے والے رپورٹر 'انیس دیاب'  بشار الاسد کے حامی ملک روس کی طرف سے ادلب پر کئے گئے فضائی حملے میں ہلاک ہو گئے

ادلب کی آواز ہمیشہ کے لئے چُپ ہو گئی

شام میں سول ڈیفنس  کے ذرائع ابلاغ کے ذمہ دار اہلکار اور ترکی کی اناطولیہ خبر رساں ایجنسی کے لئے آزاد رپورٹنگ کرنے والے رپورٹر 'انیس دیاب'  بشار الاسد کے حامی ملک روس کی طرف سے ادلب پر کئے گئے فضائی حملے میں ہلاک ہو گئے ہیں۔

شامی فوجی مخالفین  کے ائیر ٹاور سے موصول معلومات کے مطابق ہمیم ائیر بیس سے اڑنے والے روسی طیاروں نے ادلب کی تحصیل خان شیخون  پر فضائی حملہ کیا۔

انیس  دیاب اس حملے میں فرائض کی ادائیگی کے دوران خالق حقیقی سے جا ملے۔

واضح رہے کہ گذشتہ سال دیاب  انتظامی فورسز کے حملے میں پاوں سے زخمی ہو گئے تھے اور انکا علاج ترکی میں کیا گیا تھا۔

ادلب میں ان کی اتاری گئی کثیر تعداد میں تصاویر  اور ویڈیوز دنیا بھر کے معروف ذرائع ابلاغ میں شائع ہوئیں۔

ادلب سول ڈیفنس  کے ڈائریکٹر  مصطفیٰ حاجی نے دیاب کی موت پر اناطولیہ خبر رساں ایجنسی کے لئے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ دیاب، خان شیخون میں کیمیائی اسلحے کے استعمال کے عینی شاہدین میں سے تھا۔ وہ شدید حملوں والے علاقوں میں بے خوف کام کرتا تھا اور دنیا کو  ادلب اور شام کی صورتحال سے آگاہ کرنا اس کا مشن بن چکا تھا۔



متعللقہ خبریں