جنوبی ایران سے 30 ٹن دھماکہ خیز مواد برآمد

اس دھماکہ خیز مواد کی ایک بڑی مقدار کو سال 2017 میں چبہ ہار شہر سے منسلک قصرِ قند علاقے میں  مارے جانے والے انصار الفرقان نامی مسلح گروہ کے سرغنہ  جلیل کانبر زہی کی جانب  سے ملک میں داخل کیا گیا تھا

1119820
جنوبی ایران سے 30 ٹن دھماکہ خیز مواد برآمد

ایران کی جنوبی  سرحدوں  سے گزشتہ  دو برسوں میں تقریباً 30 ٹن دھماکہ خیز مواد برآمد کیا گیا ہے۔

پاسداران ِ انقلاب کی القدس فورس ہیڈ کوارٹر کے کمانڈر محمد مرانی  نے  جنوبی ایران  میں اکثر و بیشتر بم حملے ہونے کا کہتے ہوئے  اس دائرہ کار میں وسیع پیمانے کے آپریشنز میں حالیہ دو برسوں میں تقریباً تیس ٹن دھماکہ خیز مواد پکڑے جانے کی  وضاحت کی ہے۔

ایرانی میڈیا کی خبر کے مطابق مرانی نے  بتایا ہے کہ اس دھماکہ خیز مواد کی ایک بڑی مقدار کو سال 2017 میں چبہ ہار شہر سے منسلک قصرِ قند علاقے میں  مارے جانے والے انصار الفرقان نامی مسلح گروہ کے سرغنہ  جلیل کانبر زہی کی جانب  سے ملک میں داخل کیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ ایران میں زیادہ تر سنی شہریوں کے مقیم ہونے والے پاکستانی سرحدوں سے ملحقہ سستان اور صوبہ بلوچستان  میں سیکورٹی قوتوں پر حملے کرنے والی انصارالفرقان تنظیم،  حزب ِ انصار ِ ایران اور الا فرقان نامی دو گروہوں کے الحاق سے وجود میں  آئی تھی۔

 



متعللقہ خبریں