شمالی کوریا: جنوبی کوریا "خود کُشی ہسٹیریا" میں مبتلا ہو گیا ہے

جنوبی کوریا "خود کُشی ہسٹیریا" میں مبتلا ہے اور اسے ان کاروائیوں کے خوفناک نتائج بھگتنا پڑیں گے: کِم یو۔جونگ

2160426
شمالی کوریا: جنوبی کوریا "خود کُشی ہسٹیریا" میں مبتلا ہو گیا ہے

شمالی کوریا کے لیڈر کِم جونگ۔اُن کی ہمشیرہ کِم یو۔جونگ نے کہا ہے کہ جنوبی کوریا کی مشقیں "خود کُشی ہسٹیریا" ہیں۔

کِم یو۔جونگ نے، جنوبی کوریا کی حقیقی اسلحے سے کی گئی جنگی مشقوں کے خلاف ردعمل کا اظہار کیا اور کہا ہے کہ اگر اشتعالی کاروائیاں جاری رکھی گئیں تو پیانگ یانگ بھی عسکری اقدامات کرے گا۔

انہوں نے سرحدی علاقے میں اور اصلی ایمونیشن کے ساتھ مشقیں کرنے کے باعث سیول کو "قصداً تناو میں اضافے" کا قصوروار ٹھہرایا اور کہا ہے کہ اصل سوال یہ  ہے کہ دشمن نے آخر کیوں سرحدی علاقے میں اس نوعیت کی جنگی مشقیں شروع کی ہیں؟ جنوبی کوریا "خود کُشی ہسٹیریا" میں مبتلا ہے اور اسے ان کاروائیوں کے خوفناک نتائج بھگتنا پڑیں گے"۔

کِم نے کہا ہے کہ جنوبی کوریا کی حکومت تناو میں اضافہ کر کے اپنے داخلہ پالیسی بحران سے بچنا چاہتی ہے۔ اگر ہم جنوبی کوریا کی کاروائیوں کو ، ہماری ملکی خودمختاری کی خلاف ورزی اور اعلان جنگ کے مساوی قرار دیں تو ہماری مسلح افواج ، آئین کے انہیں تفویض کردہ ،اختیار  کا فوری استعمال شروع کر دیں گی"۔

دوسری طرف جنوبی کوریا وزارت دفاع نے کہا ہے کہ مذکورہ علاقے میں حقیقی ایمونیشن کے ساتھ منعقدہ فوجی مشقیں طے شدہ پروگرام کے مطابق جاری رہیں گی۔

واضح رہے کہ جنوبی کوریا نے، حکومت کی طرف سے 2018 کے'بین الکوریا سمجھوتے' کو التوا میں ڈالے جانے کے بعد پہلی دفعہ، 2 جولائی کو شمالی کوریا کے ساتھ سرحد ی علاقے میں اصلی ایمونیشن اور اسلحے کے ساتھ مشقیں شروع کر دی تھیں۔

جنوبی کوریا  بحریہ نے بھی 26 جون کو، 7 سال کے بعد پہلی دفعہ، شمالی کوریا کے ساتھ سرحدی جزائر  میں اصلی ایمونیشن کے ساتھ مشقیں کی تھیں۔



متعللقہ خبریں