میانمار میں فوج کے ہیلی کاپٹر سے فائرنگ سے 6 بچے ہلاک اور 17 زخمی  ہونے کادعویٰ

مقامی ذرائع میزیما، ایراوڈی سائٹس اور رہائشیوں کی معلومات کی بنیاد پر، گاؤں میں ایک بدھ خانقاہ میں واقع اسکول پر فوج کے ہیلی کاپٹروں سے فائرنگ کی گئی

1882061
میانمار میں فوج کے ہیلی کاپٹر سے فائرنگ سے 6 بچے ہلاک اور 17 زخمی  ہونے کادعویٰ

16 ستمبر کو میانمار کی فوج کے ہیلی کاپٹروں کے ذریعے ساگانگ علاقے کے گاؤں لیٹ کونے کے ایک اسکول میں فائرنگ کے نتیجے میں کم از کم 6 بچے ہلاک اور 17 زخمی  ہونے کا دعویٰ  کیا گیا ہے۔

مقامی ذرائع میزیما، ایراوڈی سائٹس اور رہائشیوں کی معلومات کی بنیاد پر، گاؤں میں ایک بدھ خانقاہ میں واقع اسکول پر فوج کے ہیلی کاپٹروں سے فائرنگ کی گئی۔

بتایا گیا کہ حملے میں اسکول کے کم از کم 6 بچے اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے اور 17 زخمی ہوئے۔

دوسری جانب سرکاری میڈیا نے اعلان کیا کہ مسلح گروپوں نے فوج پر حملہ کرنے کے لیے اسکول پر فائرنگ کی اور ہلاکتوں کی وجہ شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کرنا ہے۔

مقامی باشندوں نے دعویٰ کیا کہ پہلی فائرنگ کے بعد کچھ بچے جائے وقوعہ پر ہی ہلاک ہوئے اور کچھ فوجیوں کے گاؤں میں داخل ہونے کے بعد ہلاک ہوئے۔

دو رہائشیوں نے، جنہوں نے سیکورٹی خدشات کی وجہ سے اپنی شناخت ظاہر کرنے سے انکار کیا، کہا کہ بعد میں فوج نے لاشوں کو 11 کلومیٹر دور ایک قصبے میں لے جا کر دفن کر دیا۔

سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی فوٹیج میں گولیوں کے سوراخ اور خون کے دھبے سمیت اسکول کی عمارت کو نقصان پہنچنے کا انکشاف ہوا ہے۔

میانمار میں مسلح جدوجہد کے ذریعے خودمختاری کا مطالبہ کرنے والے فوج اور اقلیتی گروپوں کے درمیان تنازعات میں مسلسل اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

حکومت کئی دہائیوں سے نسلی طور پر اکثریتی سرحدی علاقوں میں مسلح گروہوں سے لڑ رہی ہے۔



متعللقہ خبریں