بھارت میں خاتون ڈاکٹر کے گینگ ریپ اور قتل کے خلاف مظاہرے جاری

بھارت میں ایک اور خاتون ڈاکٹر کو ریپ کے بعد بے دردی سے قتل کرنے کے واقعے کے خلاف ملک بھر میں احتجاج شروع ہو گیا ہے جبکہ زیادتی کے ملزمان کو سخت سزا دینے اور ایسے واقعات کے انسداد پر بحث شروع ہو گئی ہے

بھارت میں خاتون ڈاکٹر کے گینگ ریپ اور قتل کے خلاف مظاہرے جاری

بھارتی شہر حیدر آباد میں گزشتہ ہفتے ایک خاتون کے گینگ ریپ اور قتل کے واقعے کے خلاف عوامی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے۔

بھارت میں ایک اور خاتون ڈاکٹر کو ریپ کے بعد بے دردی سے قتل کرنے کے واقعے کے خلاف ملک بھر میں احتجاج شروع ہو گیا ہے جبکہ زیادتی کے ملزمان کو سخت سزا دینے اور ایسے واقعات کے انسداد پر بحث شروع ہو گئی ہے۔

بھارت کی ریاست تلنگانہ کے شہر حیدر آباد میں 27 نومبر کو چار ملزمان نے 26 سالہ وٹرنری ڈاکٹر کو اجتماعی زیادتی کے بعد گلا دبا کر قتل کر دیا تھا۔ ملزمان نے خاتون کی شناخت مٹانے کے لیے ریپ کے بعد اس کی لاش کو آگ لگا دی تھی۔

اس واقعے کے خلاف ملک بھر میں احتجاج کیا جا رہا ہے۔ سماجی کارکن اور طلبہ تنظیموں کی جانب سے پیر کو بھی دارالحکومت نئی دہلی سمیت مختلف شہروں میں احتجاج کیا گیا جبکہ حکومت مخالف نعرے بازی بھی کی گئی۔

خاتون کے ساتھ زیادتی اور اس کے قتل کے الزام میں چار افراد کو حراست میں لیا گیا ہے جن کی عمریں 20 سے 26 سال کے درمیان بتائی جا رہی ہیں جب کہ فرائض میں غفلت کے الزام میں تین پولیس اہلکاروں کو معطل کیا گیا ہے۔

یاست تلنگانہ میں وٹرنری ڈاکٹر کے ساتھ زیادتی اور قتل کے واقعے پر پیر کو پارلیمنٹ میں بھی ارکان نے اس پر کھل کر اظہار خیال کیا۔

بھارت کے ایوان بالا راجیہ سبھا کی رکن جیا بچن سمیت کئی ارکان نے خاتون ڈاکٹر کے قتل اور زیادتی کے واقعے کو ملک کے لیے شرمناک قرار دیا۔

سماج وادی پارٹی کی رکن جیا بچن نے ایوان میں کہا کہ تسلسل کے ساتھ اس طرح کے واقعات ہو رہے ہیں اور لوگ اب حکومت سے جواب چاہتے ہیں۔

واضح رہے کہ جیا بچن مشہور اداکار امیتابھ بچن کی اہلیہ ہیں جبکہ خود بھی اداکاری کر چکی ہیں۔

 



متعللقہ خبریں