جموں و کشمیرکے 55 دیہاتوں سے 2 ہزار 700 اجتماعی قبریں موجود ہونے کا انکشاف

دی ہندو اخبار کی رپورٹ کے مطابق ، انٹر نیشنل ہیومن راٹس  کورٹ اور کشمیر میں عدالتِ انصاف  (آئی پی ٹی کے)  نامی  این جی  او   کی  جانب سے شائع کردہ رپورٹ  میں  کشمیر کے شمال میں 55 دیہات میں  کی جانے والے کھدائی کے دوران  2 ہزار 700  قبریں  دریافت ہوئی ہیں

جموں و کشمیرکے 55 دیہاتوں سے 2 ہزار 700 اجتماعی قبریں موجود ہونے کا انکشاف

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے انسانیت سوز مظالم جاری ہیں اور اندازوں کے مطابق 70 ہزار سے زائد بے گناہ کشمیریوں کو قتل کیا جا چکا ہے۔ بھارتی فوج کی جارحیت کا ایک خوفناک پہلو یہ ہے بھارتی فورسز اپنی کارروائیوں کے دوران کشمیریوں کو شہید کرنے کے بعد بسا اوقات ان کی نعشیں ورثاء کے سپرد کرنا بھی گوارا نہیں کرتے اور انہیں تجہیز و تکفین کے بغیر دفنا دیا جاتا ہے۔

ہندوستانی انسانی حقوق کے محافظوں نے اطلاع دی ہے کہ جموں کشمیر کے شمال میں اجتماعی قبریں برآمد ہوئی ہیں جہاں کم از کم   2 ہزار 900 افراد کو  دفن کیا گیا ہے۔

 

دی ہندو اخبار کی رپورٹ کے مطابق ، انٹر نیشنل ہیومن راٹس  کورٹ   اور  کشمیر   میں  عدالتِ انصاف   (آئی پی ٹی کے)  نامی  این جی  او   کی  جانب سے شائع کردہ  رپورٹ  میں  کشمیر کے شمال میں بانڈی پورہ ، بارہ مولہ اور کپواڑہ گاؤں میں  55 دیہات میں  کی جانے والی کھدائی کے دوران  2 ہزار 700  قبریں  دریافت ہوئی ہیں  اور ان  قبروں میں کم از کم 2 ہزار 900 افراد  کی نعشوں تک رسائی حاصل  کرنے سے آگاہ کیا ہے۔  

 

اس این جی او نے ہندوستان کے قومی انسانی حقوق کمیشن اور جموں کشمیر ہیومن رائٹس کمیشن نے تنظیم سے اس واقعے می کی چھان بین کرنے میں مددگار ہونے  ، اجتماعی قبروں کی تلاش پر مشتمل رپورٹ ، جموں و کشمیر کے خاتمہ شدہ ریاستی انتظامیہ کے سابق وزیر اعظم عمر عبداللہ اور ہندوستانی حکومت کے متعلقہ اداروں  سے آگاہ کیا گیا ہے۔

 

آئی پی ٹی کے کی بانی آنگنا چیترجی  نے کہا ہے کہ   شناخت شدہ 2 ہزار 700 قبروں میں سے 2 ہزار 373 گمنام ، 154 قبروں میں  2 لاشیں ، 23 قبروں میں  3 سے 17 لاشیں  برآمد ہوئی ہیں ۔

 

ہندوستانی حکومت نے   5 اگست ، 2019 کو  آئینی ترمیم کرتے ہوئے  جموں و کشمیر  کی نصف صدی سے جاری  خود مختیاری  کو  آرٹیکل 370  کے ذریعے  ختم کردیا ،  جس  سے  خطے کی خصوصی حیثیت کا خاتم ہونے کے ساتھ ساتھ  جمو ں و کشمیر کا الحاق  ہندوستان سے کرلیا۔

 رپورٹ کے مطابق، جموں و کشمیر میں اب تک 8000 افراد لاپتہ ہو چکے ہیں۔ اسی طرح کشمیر کے مختلف علاقوں، پونچھ، راجوڑی، بارہ مولا، باندی پورہ اور کپواڑہ سے دریافت ہونے والی اجتماعی قبروں کا معاملہ بھی جوں کا توں ہے۔ کشمیر کے انسانی حقوق کمیشن نے  ڈی این اے ٹیسٹوں، کاربن ڈیٹنگ اور دیگر جدید طریقوں کی مدد سے مدفون افراد کی شناخت طے کرنے کا مطالبہ کیا ہے مگر اس پر کوئی پیش رفت نہیں ہوئی۔ رپورٹ کے مطابق اب تک 7000 سے زائد بے شناخت اور اجتماعی قبریں دریافت ہو چکی ہیں۔ فروری میں انسانی حقوق کے عالمی ایوارڈ یافتہ کارکن پرویز امروز کی سربراہی میں تنظیم والدین لاپتہ افراد کے وکلا کو اجتماعی قبروں کے مقامات پر جانے کی ممانعت کر دی گئی۔

جموں و کشمیر سول سوسائٹی اتحاد‘ اور ’تنظیم برائے والدین لاپتہ افراد‘ کی مشترکہ رپورٹ میں سن 2018 میں رونما ہونے والے حقائق کا احاطہ کیا گیا ہے، جن کے مطابق بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں قتل، تشدد، جبری اغوا، تذلیل، ہراس، جنسی بدسلوکی، زنابالجبر، غیر قانونی گرفتاریاں، مظاہرے، ماتم، ناکے، چھاپے، پولیس مقابلے اور جلاؤ گھیراؤ زندگی کا روزمرہ بن چکا ہے۔ اس دوران آزادی کا مطالبہ کرنے والے کارکن اور انہیں کچلنے کے لیے موجود سات لاکھ ریاستی اہلکار گویا ’پتھرائے‘ گئے ہیں۔ قوم پرستی اور مذہب پرستی کے نام پر مفاد پرستی کے چلن نے جنوبی ایشیا کو دنیا کا خطرناک ترین خطہ بنا ڈالا ہے۔

رپورٹ میں سن 2018 کو اس دہائی کا مہلک ترین برس قرار دیا گیا ہے۔ اس برس 586 افراد قتل ہوئے جن میں 160 سویلین،267 مسلح باغی اور بھارت کی مسلح افواج اور پولیس کے159 اہلکار شامل تھے۔ اس برس قانون نافذ کرنے والے اداروں کی کارروائی کے نتیجہ میں مسلح باغیوں کی ہلاکتیں (267) درحقیقت 2016 اور سن 2017 کے مقابلہ میں زیادہ تھیں کہ جب بالترتیب 145 اور108 مسلح باغی قتل ہوئے۔ ہلاک ہونے والوں میں سیاسی کارکن بھے تھے، سماجی کارکن بھی، پولیس اور فوجی اہلکار بھی۔ فریقین کے اہل خانہ پر ٹارگٹ حملوں کے واقعات بھی ہوئے۔ انہی مقتولین میں دو ایسے افراد بھی شامل تھے جن کا دماغی توازن درست نہ تھا۔



متعللقہ خبریں