پیرو نے تارکین وطن کی آمد کو روکنے کے لیے سرحدوں پر ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا

پیرو کی صدر ڈینا بولوارتے نے کہا کہ حال ہی میں غیر قانونی طور پر ملک میں داخل ہونے والے تارکین وطن کی تعداد میں شدید اضافہ ہوا ہے، اور اعلان کیا کہ انہوں نے غیر قانونی کراسنگ کو کنٹرول کرنے کے لیے سرحدوں پر ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا ہے

1980019
پیرو نے تارکین وطن کی آمد کو روکنے کے لیے سرحدوں پر ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا

پیرو نے تارکین وطن کے بڑے پیمانے پر  بہاو  کو روکنے کے لیے اپنی سرحدوں پر ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا ہے۔

پیرو کی صدر ڈینا بولوارتے نے کہا کہ حال ہی میں غیر قانونی طور پر ملک میں داخل ہونے والے تارکین وطن کی تعداد میں شدید اضافہ ہوا ہے، اور اعلان کیا کہ انہوں نے غیر قانونی کراسنگ کو کنٹرول کرنے کے لیے سرحدوں پر ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ  فوجی یونٹ چلی، بولیویا، برازیل، ایکواڈور اور کولمبیا کی سرحدوں پر تعینات کیے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ  انہوں نے یہ فیصلہ سیکیورٹی کے مقاصد کے لیے لیا اور کہا کہ "ہر روز حملوں، ڈکیتیوں اور مختلف جرائم میں غیر ملکی ملوث ہوتے ہیں، اس لیے ہمیں احتیاط برتنی ہوگی۔

وزیر دفاع جارج شاویز نے  بھی کہا ہے  کہ  ملک میں غیر قانونی اور غیر قانونی داخلے کو روکنے کے لیے ہنگامی حالت کا اعلان کیا گیا  ہے۔

خبروں کے مطابق   پیرو کے شہر تاکنا اور چلی کے آریکا شہروں کے درمیان سیکڑوں تارکین وطن  کے جمع ہونے  اور سرحدوں کو عبور کرنے کی کوشش کر  نے کے دوران  وقتاً فوقتاً سکیورٹی فورسز کے ساتھ جھڑپیں ہونے کی اطلاعات مل رہی تھیں۔

انہوں نے  کہا کہ  چلی نے سرحدوں پر کنٹرول بڑھا دیا ہے اور وہ غیر قانونی تارکین وطن کو ملک میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دے گا۔

قومی ادارہ برائے شماریات کے مطابق پیرو میں رہنے والے 10 میں سے 9 تارکین وطن وینزویلا کے باشندے ہیں  جن کی تعداد   1.3 ملین کے  لگ بھگ ہے۔     



متعللقہ خبریں