7 ممالک کے وزرائے خارجہ یوکرین کے دورے پر، روس کی جنگ انتقامی جنگ ہے: زلنسکی

ماسکو کے احکامات پر عمل نہ کرنے کی وجہ سے روس نے یوکرین کے خلاف انتقامی جنگ شروع کر دی ہے: صدر ولادی میر زلنسکی

1912414
7 ممالک کے وزرائے خارجہ یوکرین کے دورے پر، روس کی جنگ انتقامی جنگ ہے: زلنسکی

یوکرین کے صدر ولادی میر زلنسکی نے یوکرین کے دورے پر آنے والے 7 ممالک کے وزرائے خارجہ کے ساتھ ملاقات کی۔

صدر زلنسکی نے سوشل میڈیا سے جاری کردہ ویڈیو بیان میں کہا ہے کہ ہم نے، ایستونیا کے وزیر خارجہ 'اُرماس رینسالو'، آئس لینڈ کے وزیر خارجہ 'تھورڈیس کولبرن گائیلفا ڈوٹِر'، لٹویاکے وزیر خارجہ 'ایڈگارس رنکیوکس'، لتھوانیا کے وزیر خارجہ 'گبریلئین لینڈزبرگِس'، ناروے کی وزیر خارجہ 'اینیکن ہٹفیلٹ'، فن لینڈ کے وزیر خارجہ 'پیکا ہاوِسٹو' اور سویڈن کے وزیر خارجہ 'ٹوبیئس بِلسٹروم' کے ساتھ ملاقات کی۔

مہمان وزرائے خارجہ کو مخاطب کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہے کہ آپ کا یہ دورہ  خاص طور پر اس مشکل دور میں ساجھے دار ممالک کے، یوکرین کے ساتھ، اتحاد و تعاون کا ایک اہم اظہار ہے"۔

زلنسکی نے یوکرین کی زمینی سالمیت اور خودمختاری کے دفاع کے لئے فعال اور موئثر امداد پر بالٹک اور شمالی یورپی ممالک کا شکریہ ادا کیا ہے۔

پیغام میں صدر ولادی میر زلنسکی نے 24 فروری سے جاری روس۔یوکرین جنگ کی حالیہ صورتحال کا بھی جائزہ لیا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ ماسکو کے احکامات پر عمل نہ کرنے کی وجہ سے روس نے یوکرین کے خلاف انتقامی جنگ شروع کر دی ہے لیکن یوکرین  کسی صورت بھی تباہی کا گڑھ نہیں بنے گا۔

زلنسکی نے ،انسانی امداد کے زیرِ مقصد اور دنیا میں ضرورت مند ممالک کو اناج پہنچانے کی غرض سے، یوکرین میں اناج کوریڈور پلیٹ فورم کے قیام کی یاد دہانی کروائی اور کہا ہے کہ  اس کام میں ہمیں ترکیہ سمیت امریکہ، کوریا، جاپان، بعض یورپی یونین ممالک، نیٹو اور اقوام متحدہ  سے قابل ذکر تعاون حاصل ہوا ہے۔



متعللقہ خبریں