آذربائیجان: آرمینیا کا فوجی جانی نقصان 2 ہزار 300 تک پہنچ گیا ہے

آذربائیجان فورسز کی طرف سے شروع کئے گئے جوابی حملے میں آرمینی فوج کا جانی نقصان 2 ہزار 300 فوجیوں تک پہنچ گیا ہے: آذربائیجان وزارت دفاع

1500058
آذربائیجان: آرمینیا کا فوجی جانی نقصان 2 ہزار 300 تک پہنچ گیا ہے

آرمینیا کے زیرِ قبضہ آذربائیجان کے علاقے  کی آزادی کے لئے  آذربائیجان فورسز کی طرف سے شروع کئے گئے جوابی حملے میں آرمینی فوج کا جانی نقصان 2 ہزار 300 فوجیوں تک پہنچ گیا ہے۔

آذربائیجان وزارت دفاع کی طرف سے جاری کئے گئے بیان کے مطابق رات بھر شدید جھڑپیں جاری رہیں۔

بیان کے مطابق 27 سے 30 ستمبر کے دوران 2 ہزار 300 آرمینی فوجی ہلاک  اور زخمی ہو چکے ہیں تقریباً 130 ٹینکوں اور بکتر بند گاڑیوں کو تباہ کیا جا چکا ہے،200 سے زائد توپ اور میزائل سسٹموں ، تقریباً 25 مارٹر دفاعی سسٹموں، 6 کمانڈ منیجمنٹ اور کمانڈ مانیڑنگ مقامات، 5 ایمونیشن ڈپووں ، تقریباً 50 اینٹی ٹینک اسلحے اور 55 فوجی گاڑیوں کو تباہ کر دیا گیا ہے۔

بیان کے مطابق کل کی جھڑپوں میں مقبوضہ تحصیل' ہوجا وند' کے علاقے شوشا کند میں آرمینیا کے ایک ایس۔300 سسٹم  کو بھی ناکارہ بنا دیا گیا ہے۔ گنوائے ہوئے علاقوں کے دوبارہ حصول کے لئے ماداگوز گاوں میں جمع آرمینی فورسز کی طرف سے آج صبح کئے گئے حملے کو روک دیا گیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ تمام  فرنٹ لائنوں پر فوجی آپریشن جاری ہے۔

دوسری طرف آذربائیجان فروسز کی طرف سے آع دیرے اور ترتر  کی سمت آرمینی فورسز کو محاصرے میں لینے کا بھی اعلان کیا گیا ہے۔

آرمینیا کی طرف سے جاری کئے گئے بیان میں کہا گیا تھا کہ آذربائیجان فورسز  نے ترتر  شہر پر توپ فائرنگ کی ہے جس کے نتیجے میں شہری زخمی ہوئے ہیں۔

اس دوران آرمینی فورسز نے آذربائیجان کی تحصیل گوران بوئے کے گاوں زیریں آع جا کند پر توپ فائرنگ کی ہے۔

آذربائیجان وزارت دفاع کی طرف سے جاری کردہ بیان کے مطابق شہری آبادی  پر حملوں کی صورت میں آذربائیجان کی فوج بھی اس کا جواب دے گی۔



متعللقہ خبریں