پاکستان ڈائری - 36

پاکستان ڈائری میں اس بار کراٹے چیمپئین نرگِس حمید کا خصوصی انٹرویو ۔19 سالہ نرگِس وہ پہلی پاکستانی خاتون ہیں جنہوں نے ایشنز گیمز 2018 میں کراٹے 68 کلوگرام مقابلے میں پاکستان کےلئے کانسی کا تمغہ جیتا

پاکستان ڈائری - 36

پاکستان ڈائری - 36/کراٹے

پاکستان ڈائری میں اس بار کراٹے چیمپئین نرگِس حمید کا خصوصی انٹرویو ۔19 سالہ نرگِس وہ پہلی پاکستانی خاتون ہیں جنہوں نے ایشنز گیمز 2018 میں کراٹے 68 کلوگرام مقابلے میں پاکستان کےلئے کانسی کا تمغہ جیتا۔وطن واپسی پر پاکستان کراٹے فیڈریشن اور عوام نے ان کا لاہور ائیرپورٹ پر پرتپاک استقبال کیا۔

کوئٹہ ہزارہ ٹاون کینرگِس بچپن سے ہی کھیلوں کی شوقین تھی والدین کی بھرپور توجہ نے انہیں موقع دیا اور تعلیم کے ساتھ کھیلوں کا سفر شروع ہوا۔ٹی آر ٹی اردو سروس سے بات کرتے ہوئے نرگس نے کہا میں بہت خوش ہو اپنے ملک کے لئے تمغہ جیتنا یہ خوشی ناقابل بیان ہے۔

نرگِس 1998 میں کوئٹہ میں پیدا ہوئیں ۔ہزارہ ٹاون کے گورنمنٹ سکول سے تعلیم کا آغاز ہوا۔اس وقت وہ گورنمنٹ گرلز ڈگری کالج کی طالب علم ہیں حال ہی میں انکا سیکنڈ ائیر کا رزلٹ آیا ہے انہوں نے گیارہ سو میں سے 954 مارکس لئے ہیں ۔ان کے مضامین میتھ اکنامکس اور شماریات ہیں ۔اب وہ آگے بزنس اور اکاؤنٹنٹگ پڑھیں گی۔

وہ کہتی ہیں میرے ابو کو کھیلوں کا شوق تھا انہوں نے کہا میرے تمام بچے تعلیم کے ساتھ سپورٹس کھیلیں گے۔میں پانچ سال کی عمر سے کھیلوں کا حصہ ہو۔پہلے میں مارشل آرٹ میں تھی بعد میں کراٹے جوائن کرلیا۔ہزارہ کراٹے اکیڈمی کو جوائن کیا اور ٹریننگ حاصل کی۔


نرگِس کوئٹہ کے حالات کو یاد کرتے ہوئے کہتی ہیں پہلے ماحول میں خوف تھا مجھے ٹریننگ کے لئے اور چمپیئن شپ کے لئے سفر کی وجہ سے ریلوے اسٹیشن جاتے ہوئے خوف آتا تھا ۔میرے والدین الگ پریشان ہوتے تھے۔تاہم اب حالات مخلتف ہیں امن و امان ہے اور اس کا کھیلوں پر مثبت پڑا ہے۔ہزارہ ٹاون کے سپورٹس کلب آباد ہوگئے ہیں۔

وہ کہتی ہیں 2011 اسلام آباد میں پہلا گولڈ میڈل جیتا اس طرح میرا سفر شروع ہوا۔مسلسل قومی جونئیر کراٹے چمپیئن رہی۔دو بار نیشنل لیول مقابلہ جات میں میڈل لینے کی ہیٹرک کی۔عالمی مقابلوں کے بارے میں بات کرتے ہوئےنرگِس نے کہا کہ اگست 2017 میں سری لنکا میں چوتھی ساوتھ ایشین چمپئن شپ میں گولڈ میڈل حاصل کیا۔2016 میں تیسری ساوتھ ایشین چمپئن شپ انڈیا میں ایک سلور اور دو برونز میڈل حاصل کئے ۔4ویں اسلامک گیمز باکو میں سیمی فائنل تک گئ تاہم جیت نہیں کی ۔دبئی پرئمیر لیگ خود اپنے خرچے پر گئ۔

نرگِس کہتی ہیں ایشنز گیمز کے لئے جب فیڈریشن کا پہلا کیمپ لگا تو میں نہیں جاسکی کیونکہ میرے امتحانات ہورہے تھے۔دوبارہ عید پر کیمپ لگا میں اسلام آباد میں ٹریننگ کرتی رہی۔سلیکشن کے بعد ہم 6 اتھلیٹ رہ گئے۔

میری دوست بھی سلیکٹ نا ہوسکی اور میں نے ایشین گیمز کے لئے پہلی بار تنہا سفر کیا۔میرے دونوں کوچز نے میرا بہت ساتھ دیا انکی محنت کی بدولت میں تمغہ لینے میں کامیاب ہوئی۔میرے کوچ شاہ محمد نے کہا میڈل لانا ہے ہم دونوں کی آنکھیں بھر آئیں ۔میرا نیپال سے مقابلہ تھا لیکن میں نے ٹھان لیا کہ جیتنا ہے ۔میڈل ملنے کے بعد میں نے سجدہ کیا اور میں اور میرے کوچ خوشی سے رو رہے تھے۔

وہ کہتی ہیں لاہور اور کوئٹہ میں میرا پرتپاک استقبال ہوا ۔میرے لئے یہ پیار اور عزت قابل فخر ہے۔وہ کہتی ہیں پہلے صرف کرکٹرز کا ایسے استقبال ہوتا تھا میڈیا بھی صرف انکو کوریج کرتا تھا لیکن اب ایسا نہیں ہے۔ہزارہ ٹاون میں بھی سب میری کامیابی پر بہت خوش ہیں۔

اپنی روٹین کے بارے میں کہا صبح کا آغاز نماز سے ہوتا ہے ناشتہ 8 بجے تک کرتے ہیں ۔ہم لوگ جنک فوڈ اور فریزی ڈرنکس بلکل نہیں پیتے۔میں سبزی پھل شوق سے کھاتی ہو اور پانی بہت زیادہ پیتی ہو۔ہم لوگ تین گھنٹے صبح اور تین گھنٹے شام کو پریکٹس کرتے ہیں ۔

نرگِس حمید کہتی ہیں کہ ان کا اگلا ٹارگٹ اولمپک گیمز ہے۔ اس کے لئے زیادہ پریمیئر لیگز کھیلنا ہوگی اور کوچ فارن ہونا چاہئے۔وہ کہتی ہیں ہمیں ٹریننگ میں مکمل سہولیات دی جائے فیڈریشن کا بجٹ بڑھایا جائے ۔ 

نرگِس کہتی ہیں خواہش ہے کہ میں آرمی جوائن کرلو اور جنگ میں اپنے وطن کا دفاع کرو ۔مجھے اپنی پاک آرمی سے پیار ہے۔مجھے وزیر اعظم پاکستان عمران خان سے بہت امیدیں ہے وہ خود سپورٹس مین ہیں وہ ایتھلیٹس کو بھرپور سہولیات فراہم کریں گے۔ہم کم سہولیات میں برونز لیے آتے ہیں اگر ہمیں مزید سہولیات حکومت فراہم کرے تو انشاءاللہ ہم پاکستان کے لئے گولڈ میڈل لائیں گے۔

 



متعللقہ خبریں