ترجمان صدر ابراہیم قالن کی الا فرابی سے متعلق اہم تحریریں

اپنے نچوڑ میں  ہم سب ، ہمارے  پیشے ، تعلیم  یا پھر  ہماری مہارت   جو کچھ  بھی کیوں نہ ہو ، ہم  روحانی طور پر  اپنے خالق  حقیقی کے قریب   ہونے کا مقصد رکھتے ہیں

ترجمان صدر ابراہیم قالن کی الا فرابی سے متعلق اہم تحریریں

اسلامی تفکر کے   رسم و رواج کے  مرکزی  پہلووں کو یکجا کرنے والے الا فرابی    کی یہ دعا محض  فلسفہ اسلام  کے طالب علموں  کے  لیے ہی نہیں  بلکہ بیک  وقت فلسفی سوچ ، روحانی     پاکیزگی اور   صفائی میں  دلچسپی رکھنے والوں ،  منطقی    واضح پن  کی ضرورت محسوس کرنے والوں کے    لیے   ایک  خصوصی اہمیت کی حامل ہے۔

ایک فلاسفر    خدا کے سامنے جس  طرح  گڑگڑاتا ہے؟  اس    کا    کسی دوسری   چیز   کی تمنا  کرنے  میں  فرق  نہیں پایا جاتا۔ اپنے نچوڑ میں  ہم سب ، ہمارے  پیشے ، تعلیم  یا پھر  ہماری مہارت   جو کچھ  بھی کیوں نہ ہو ، ہم  روحانی طور پر  اپنے خالق  حقیقی کے قریب   ہونے کا مقصد رکھتے ہیں۔ تا ہم  کسی دورے زاویے سے  دیکھا جائے تو   کی جانے والی     ہر دعا کے   در اصل  ہماری اصلیت     کے حوالے سے  بعض حقائق کوسامنے  لاتی ہے۔

دعا کرنا ایک  سنجیدہ   عمل ہے۔ دعا مانگنے والے    فرد   کو   مکمل  طور پر حوالگی   کا احساس رکھنا چاہیے۔ یہ  خدا  سے  رابطہ کرنے    کا   ذاتی   اور     محرم   عمل بھی ہے۔   دعا   ،   متناہی ہونے والے کے لیے لامتناہی،    فانی  کے  لیے    ابدی اور    اللہ   کے بندے    کی   اپنے  اصلی مالک سے    ملاقات   کا دوسرا نام ہے۔

تمام تر     مذہبی  رسم  و ریت  انسان کی روحانی   زندگی  میں   دعا  مانگنے   کی اہمیت پر  زور  دیتے ہیں۔   اسلامی  نقطہ نظر  بھی    اللہ  تعالی     سے رابطہ   کرنے کے معاملات میں   افضل  ترین   ہے۔  یہ   صورتحال  قرآن کریم  اوررسولِ  اللہ  کی جانب  سے       اللہ   تعالی  کے   سامنے کس طرح گڑگڑانے کی ضرورت ہونے  کی عکاس ہے۔  سب سے  خوبصورت اور  دل کی گہرائیوں سے آنے والی  گڑگڑاہٹ   خداوند کریم   کی   لا محدود       رحمتوں اور انسانوں کی   صورتحال اور    مزاج کے مختلف   مراحل   پر مبنی ہوتی ہے۔

دعائیں   عمومی  طور پر  تین  حصوں پر   مشتمل ہوتی ہیں۔  پہلا   حصہ  انسان کی جانب سے  اللہ کی    حتمی طاقت اور لا محدود  رحمتوں کی   بڑائی ،   دوسرا حصہ    انسانی تفکر  اور اس کے    اللہ     پر انحصار  کو       زیر لب لانے پر مبنی ہے تو تیسرا حصہ      کسی شخص کے  براہِ راست  اللہ  تعالی  کی رحمتوں،  بھروسے، دوستی  اور  تحفظ   مانگنے پر  مشتمل ہے۔

جیسا کہ  ہر شخص منفرد ہوتا ہے اسی طرح اس  کا طرز  ِ دعا بھی   مختلف  نوعیت کا ہوتا ہے۔  یہی صورتحال    اللہ  تعالی   کو   اپنے وجود اور تمام  تر  اسباب  کے موجب اور  تمام تر   جانداروں  کے وجود   کے خالق ہونے    پر یقین  رکھنے والے فلاسفروں کے لیے بھی  لاگو ہوتی ہے۔  بعض فلاسفروں نے اپنی دعاؤں کو  تحریری شکل دی ہے تو  اس کی ہر دعا  فلاسفر کے منفرد نقطہ  نظر اور  خدا کو   تمام  تر  مخلوقوں  کے  ساتھ تعلق کی عکاس  ہوتی ہے۔  یہ  ہر چیز سے پہلے   اس شخص  کے اپنے وجود کے   حوالے سے شکر گزاری  کا مفہوم    رکھتی ہے۔ لہذا  فلاسفروں کا   حضرت ابراہیم   کے رسم و رواج کے مطابق اپنے  آپ   کے لیے مزید کچھ  طلب نہ کرنے   پر مبنی  کسی  اونتو  کازمولوجک  اصول  کی ماہیت میں  بدلنے   کا دعوی     ایک بڑے پیمانے پر بے بنیاد ہے۔ مسلم فلاسفر ،  کائنات کے  مالک   کے طور پر   خدا  اور اس کوتمام تر اسباب کا سبب ہونے کی نظر سے دیکھتے چلے آئے ہیں۔    99 اسمائے حسنہ  کا وجود  اس  کی  لا محدود طاقت  اور خوبصورتیوں کی تشریح   کرتے ہیں   جو کہ  ہماری       روحانی   اعتبار سے  رہنمائی کرتے ہیں۔

تمام   تر  ادوار  کے        عظیم  ترین   ذہنی     طاقت کے مالک   الا فرابی    نے ہمیں  اس    نمایاں    نقطہ نظر   کا اندازہ کرنے     والی    مختصر   دعاؤں  سے نوازا ہے۔ آرسطو کے بعد   دوسرے    استاد کے  طور پر   یا د کیے جانے والے الا فرابی  ایک فلاسفر، منطق پسند سیاسی     مفکر ، ماہر  ِ علم تکوین  عالم اور  موسیقار  تھے۔    اسلامی   سوچ و  تخیل   کی ریت   کے مرکزی     خیال کو یکجا کرنے والے الا فرابی   کی یہ دعا  محض اسلامی فلسفے کے طالب علموں  کے لیے  ہی نہیں  بلکہ بیک وقت  فلسفی  سوچ اور معنوی    صفائی   میں  دلچسپی  رکھنے والوں اور منطقی     واضح   پن کی ضرورت  محسوس کرنے والے     ہر  شخص کے   لیے  ایک خصوصی اہمیت کی حامل ہے۔

دعائے عظمی ٰ  کے   نام سے   یاد کی جانے والی  اس دعا کو    محمد مہدی کی جانب سے استنبول  کےسلیمانیہ  کتب خانے  میں محفوظ  دستی تحریر  سے   اخذ کرتے ہوئے    نقاد بینی کے  ساتھ  از سر نو   قلم بند کیا گیا او"ر   الا فرابی    کتاب الاملے و  نسوسن  اُخری" کے عنوان سے   بیروت میں سن 1986 میں شائع کیا گیا  ہے۔

اس کتاب کے  89 تا 92 نمبر کے صفحات پر درج   تحریروں     کی تفسیر  مندرجہ ذیل ہے: الا فرابی کی دعا  خالق حقیقی  کی   الٰہیاتی  اور  فلسفی   کاسمولوجیک   اصولوں  کو  بیک  وقت پیش  کرتی ہے۔  اپنی    لا محدود   تخلیق       کا ذکر کرنے والا اور     تمام تر مخلوقوں  کو  مقدس  درجہ    دینے والی واحد ہستی   رب  الاعالمین   ہی ہے۔ جو دعا بھی کی جائے اسے   اسی   بنیادی   حقیقت  کو بالائے طاق  رکھتے ہوئے   مانگا جانا چاہیے۔

"اے  لازمی  ہستی!اے اسباب کے سبب،    اے  ابدی   میرے اللہ  تعالی! مجھے مغالطوں  سے  محفوظ  رکھنے  اور   تمھاری خوشنودی والے کام کرنے      کی توفیق  دے!

اے مشرق و مغرب  کے رب  میرے خدایا! مجھے  اپنی عظیم  خصلت  سے نواز،     میرے کاموں  کو   مکمل کرو اور میری کوششوں اور خواہشات  کو  شرمندہ  تعبیر فرما!

نظم: " دریاؤں کے بہاؤکی طرح      ہمیشہ  حرکت کرنے والے  سات ستاروں کے مالک اے  رب العظیم

 یہ ستارے  تیرے حکم کے ساتھ ہی  محوِ  گردش رہتے ہیں۔  میں ، سیچور،  مارس  سے اچھائی  کی دعا نہیں مانگتا ، میں  ہر چیز تم ہی  سے  مانگتا ہوں!"

یہ  وجودیاتی  اور  کازمولاجیک  اصول  محض     ہوا میں  معلق نہیں ہیں؛    یہ انسانی وجود کی زنجیر  کا ایک      حصہ ہیں۔     فرابی نے   ہر چیز  کے خالق سے ہمیشہ     اسکا ساتھ دینے اور  تمام تر خوبصورتیوں و  رعنائیوں  سے سرفراز ہونے  کی دعا کی۔

"اے  میرے  خدا!  مجھے    خوبصورتی  کی   چادر  میں  لپیٹ ،    اچھائیاں  اور   خوبصورتیاں عطا فرما ،     نبیوں  کی عظمت    و     بڑائی ،    سعادت و مال و دولت ،   علم و   معلومات سے    سرفراز کر اور    تم سے دور جانے والوں  کو نیک ہدایت فرما!

اے       عظیم  رب! مجھے      مفلسی و  جہالت سے         نجات دلا اور   برائیوں سے   دور رکھ ،  مجھے شہیدوں  کے   برابر اپنے عرشوں  پر  جگہ فرما!

الا فرابی بلا حقیقت کے    نجات کے ناممکن ہونے کی  حقیقت  سے مکمل طور پر آشنا تھے۔  اس بنا پر   یہ   اللہ تعالی     کے حقائق کو   ان کی اصلی  ماہیت میں   قبول  کرنے اور ان کی جانب  مائل ہونے  کی  تمنا کرتے ہیں۔

"تم ایک  عظیم     ہستی ہو کہ   تمھارا کوئی معبود نہیں!   تم    ہر چیز کے  خالق ہو، زمین و آسمانوں کے نُور تمہی  تو ہو۔ حشمت و عزت کے مالک     مجھے  اپنی  دانائی سے فیض یاب فرما!  اے اچھائی و عظمت کے مالک ! میری روح کو  اپنی حکمت سے سرشار  کر!  میرے لیے الہام  و   روشنی   کا وسیلہ بن!   مجھے حق و انصاف کی راہ  دکھا اور اس پر کار بند رکھ!  مجھے  باطل  و ظاہر  کی تمیز کرنے کی سکت دے!  میرے نفس کو  صاف ستھرا  رکھ! تم ہی    میرا  سببِ اول ہو!"

"اے تمام تر    مخلوقوں  کے سبب  تمام   تر   نعمتوں کے مالک،    ساتوں آسمانوں کے مالک،

 اور ان کے   درمیان    خشکی اور سمندر کو  وجود بخشنے والے یا رب،

میرے  گناہ معاف فرما  اور مجھے اپنی   سرپرستی میں لے لے،

اس گنہکار اور الہام  کار  بندے کی خطاؤں کو معاف فرما!

اے ہر شے کے مالک!   اپنی عظمت کے توسط میرے  نفس و  روح کو مالی  و مادی آلودگیوں سے پاک رکھ۔"

اللہ    ابدی ہے اور    کی  رحمتیں  لا متناہی ہیں،   یعنی    فلاسفر  الا فیرابی  کمزور   اور لاغر ہے ، دنیاوی   اور  حیوانی خواہشات        سے بچنے   کے لیے    یہ اپنے رب سے  رہنمائی و تحفظ  کی گڑگڑاہٹ کچھ یوں   کرتا ہے:

"اے    انسانوں ، ستاروں اور  آسمانوں  کے مالک میرے   پیارے رب!  اس   بندے  کی انسانی    و نفسانی  خواہشات   حاوی  ثابت  ہوئی ہیں۔  مجھے ان سے بچا اور اپنے   تحفظ میں لے  لے۔   میرے دل ودماغ میں  تیرا خوف  انتہا پسندیوں کے خلاف ایک ڈھال  بنے۔ بلا شک تم ہر چیز   سے نجات دلانے والے ہو!

اے  رب مجھے   چاروں عناصر  کے زیر تسلط آنے سے  نجات دلا اور  بلند مقام عطا فرما!

اے    اللہ  !  میری روح کو منور کر اور  میرے ذہن و قلب کو اپنی محبت سے سرشار کر۔

میرے   رب مجھے شیطانی   طاقتوں  کے خلاف  جدوجہد کی طاقت دے اور   جنت میں اعلی    رتبے  کی شخصیات کے برابر جگہ عطا فرما!

فلاسفر نے    اللہ تعالی کی تمام تر خوبیوں اور عظمتوں    کو بیان  کرتے    ہوئے اس کی رحمتوں کے سائے تلے زندگی بسر کرنے   کی  دعائیں  کیں ،  یہ شخصیت   اس لیے بھی   عظیم تصور کی جاتی ہے کہ اس نے  اپنے سمیت تمام تر بنی نو انسانوں  کی اچھائی اور     بھلائی  کی بھی  دعا کی۔  تمام تر  مخلوقات  اللہ تعالی کا شکر ادا کرتی ہیں۔ایسی  مفاہمت  انسانوں  کی  اعلی ظرفی کا مظاہرہ کرتی   ہے۔  ا سکے لیے   دل کی آنکھ  کا  کھلا ہونا لازمی ہے۔

"اے حال و  الفاظ   کے  حامل انسانوں  کے مالک    بلا شک  تم ہر کسی کو مستحق    چیزیں  اور نعمتیں  عطا کرتے ہو۔  تمام  تر  مخلوقیں  تیری عطا کردہ زندگی اور رحمتوں کی بارش کے سامنے   شکر گزار  ہیں،   لیکن     نا شکرے   ان خوبیوں سے  محروم رہتے ہیں۔  ان کی دعائیں  بھی     واپس لوٹ آتی ہیں۔( سورۃ اسراء 44)

اے   رب  ہم   تیرے  شکر گزار ہیں،" کہہ دو  اللہ ایک ہے، اللہ بے نیاز ہے،  نہ اس کی کوئی اولاد  ہے اور نہ ہی  وہ کسی کی اولاد ہے  اور اس کا کوئی  شریک  نہیں۔ "  سورۃ اخلاص

الا فرابی  کا اپنی روح کو پاک رکھنے اسے  غلطیوں  سے دور رکھنے اور  حقیقت    کی  جانب مڑنے   کی خاطر  اللہ  تعالی سے  گڑگڑا کرمانگی ہوئی   دعاؤں کا  آخری حصہ  سب سے زیادہ  گہرائی   سے لبریز    دکھائی دیتا ہے۔

'اے میرے مولا!   تو نے میری روح کو چاروں  عناصر پر مشتمل  کسی     زندان میں قید   کر دیا ہے  اور  میری روح کو  ٹکڑوں میں بانٹنے   کے   کام کو  شہوت  بھرے وحشی جانوروں کے سپرد  کر دیا ہے

میرے   رب  اسے  پاک دامن کر دے،   اسے  اپنے قریب    لانے کی شکل میں  نئی شکل میں  ڈھال۔  اپنی سخاوت  اور  عظمت       سے اس  کی مدد فرما!  جنت میں اپنی جگہ لینے کے لیے اس کی توبہ قبول کر!  اس کی اعلی مقام کو واپسی    میں  تیزی لا۔ میرے نفس کو  تاریکیوں  سے  نکالتے ہوئے اپنی روشنیوں سے منور فرما۔  اسے عقل و منطق سر   سرفراز کر۔ " اللہ تعالی ایمان لانے والوں کا سر پرست ہے، یہ انہیں تاریکیوں سے اُجالے کو لیجاتا ہے۔"  (سورۃ بقرہ  257)

کوئی شخص چاہے جس قدر بھی ذہین اور با صلاحیت  ہی کیوں نہ ہو اسے   اللہ  تعالی کی رہنمائی کی ہمیشہ ضرورت رہتی ہے۔ عقل واحدانہ طور پر  کافی نہیں ہوتی؛ پختہ اخلاق اور معنویت    کا حصول  طاقتور ارادے اور نیت سے ہی ممکن ہے۔  الا فرابی اپنی   دعا مندرجہ ذیل  الفاظ کے ساتھ نکتہ پذیر کرتے ہیں:

"اے میرے   مالک ! دکھائی    نہ دینے والوں کے چہروں کو  خواب میں  دکھا اور  میری روح کو   ڈراؤنے خواب دیکھنے سے   بچا، اسے اچھائی و بھلائی    سے مالا  مال کر۔  میرے   دیکھنے،سننے  والوں     اعضاء کے ذریعے      بری  باتوں    کو  روح  تک پہنچنے  سے روک۔ میری  روح کو    مادہ     دنیا  کی    دھندلے پن سے  دور ہٹا۔ میری روح کو     عظیم روحوں     کے مد مقابل جگہ عطا فرما۔

یا رب  تم  مجھے  ہدایت  کرنے والے ، مجھے اپنی نعمتوں سے نوازنے والے  اور میرا تحفظ  کرنے والے ہو!

حمد و ثناء  محض اللہ    کی ہی  ذات کے لیے مخصوص ہے اور  اس کی رحمتوں کی بارش  اس  کے آخری  نبی   حضرت محمد ؐ  کے لیے   ہے۔



متعللقہ خبریں