جوہری ہتھیاروں پر پابندی معاہدہ اقوام متحدہ نے دستخطوں کے لیے پیش کر دیا

اقوام متحدہ  کی سلامتی کونسل کے  مستقل ارکان  امریکہ، برطانیہ، روس، فرانس اور چین نے  متعلقہ  مذاکرات  اور رائے دہی  کے  عمل میں  شرکت نہیں کی تھی

جوہری ہتھیاروں پر پابندی معاہدہ اقوام متحدہ نے دستخطوں کے لیے پیش کر دیا

جوہری اسلحہ  کو ناکارہ بنانے اور  نئے جوہری  اسلحہ کی تیاری پر پابندی  عائد کرنے کا مقصد  رکھنے والے   جوہری اسلحہ  پر پابندی  معاہدے    کو اقوام متحدہ میں  دستخط کے لیے  پیش کر دیا گیا  ہے۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں ماہ جولائی میں  122 ملکوں کی حمایت کے ساتھ قبول کردہ  اس معاہدے پر  51 ملکوں نے  دستخط کر دیے ہیں۔

معاہدے کی مخالفت کرنے والے  جوہری اسلحہ کے مالک  اور اقوام متحدہ  کی سلامتی کونسل کے  مستقل ارکان  امریکہ، برطانیہ، روس، فرانس اور چین نے  متعلقہ  مذاکرات  اور رائے دہی  کے  عمل میں  شرکت نہیں کی تھی۔

ادھر اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل  آنتونیو گوترس نے کہا ہے  کہ اس معاہدے پر  دستخط کا عمل شروع کیے   جانے پر انہیں فخر ہے۔

انہوں نے بتایا کہ سن 1945 میں  ہیروشیما اور ناگا سا میں  پیش آنے والے المیہ نے اس قسم کے اسلحہ کی تباہ کاریوں اور مضر اثرات کا مشاہدہ کرایا ہے۔ لہذا ہمیں    اس دنیا کے محفوظ مستقبل کے لیے   جوہری ہتھیاروں سے  نجات حاصل کرنی ہو گی۔

 

 

 



متعللقہ خبریں