پاک وزیر اعظم کی امریکی نائب صدر سے غیر متوقع ملاقات

پاکستان سے زیادہ کوئی دوسرا ملک افغانستان میں امن کا خواہاں نہیں، وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی

پاک وزیر اعظم کی امریکی نائب صدر سے غیر متوقع ملاقات

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی  کی  امریکی نائب صدر مائیکل پینس سے غیر متوقع ملاقات ہوئی جس دوران   افغانستان میں مذاکرات کے ذریعے تنازعات کا حل تلاش کرنے پر تبادلہ خیال ہوا ۔

سرکاری ذرائع  کے مطابق  یہ ملاقات پاکستان کی درخواست پر امریکی نائب صدر کے گھر پر ہوئی  جو کہ  30 منٹ تک جاری رہی۔

ملاقات میں وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور امریکی نائب صدر مائیکل پینس نے افغانستان پر اپنے اپنے نقطہ نظر  کو بیان کیا۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ شاہد خاقان عباسی نے مائیکل پینس کو افغانستان میں امن کی کوششوں کے لیے پاکستان کے مخلصانہ عزم کی یقین دہانی کرائی، ساتھ ہی دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی کامیابیوں پر بھی زور دیا۔

پاکستانی وزیر اعظم نے امریکی رہنما کو اس بات کی  یقین دہانی کرائی کہ پاکستان سے زیادہ کوئی دوسرا ملک افغانستان میں امن کا خواہاں نہیں ہے کیونکہ اس امن سے پاکستان براہ راست جڑا ہوا ہے۔

سفارتی مبصرین نے  پاکستانی اور امریکی رہنماؤں  کی اس  ملاقات کو گزشتہ برس اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں ہونے والے امن مذاکرات کے تسلسل  کے طور پر بیان کیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ برس اگست 2017 میں امریکہ کی افغانستان اور جنوبی ایشیا  کے حوالے سے نئی پالیسی کے اعلان کے بعد پاک۔ امریکہ تعلقات میں تناؤ پیدا  ہوا تھا، تاہم 20 ستمبر کے اجلاس میں دونوں ممالک نے معاملات کو  نبٹانے  کے بعد  تعلقات کو  جاری رکھنے کا اظہار کیا تھا۔

اس ملاقات کے حوالے سے پاکستانی اور کانگریس کے ذرائع نے بتایا کہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی جانب سے اس بات کی یقین دہانی کرائی گئی پاکستان کے چین کے ساتھ قریبی تعلقات امریکا کے تحفظات کا باعث نہیں بنیں گے اور پاکستان، امریکہ اور چین سے دوستانہ تعلقات کا متمنی  ہے۔



متعللقہ خبریں