بے نظیر بھٹو کو ہم نے مارا تھا:تحریک طالبان پاکستان کا اعتراف

کالعدم تحریک طالبان پاکستان نے بے نظیر بھٹو   کے قتل کے  10 سال گزرنے کے بعد انہیں قتل کرنے کی ذمہ داری قبول کرلی ہے

بے نظیر بھٹو کو ہم نے مارا تھا:تحریک طالبان پاکستان کا اعتراف

 کالعدم تحریک طالبان پاکستان نے بے نظیر بھٹو   کے قتل کے  10 سال گزرنے کے بعد انہیں قتل کرنے کی ذمہ داری قبول کرلی۔

بے نظیر کو قتل کرنے کا دعویٰ طالبان رہنما ابومنصور عاصم نے ’انقلاب محسود‘ کے نام سے چھپنے والی اپنی کتاب میں کیا ہے۔

یہ کتاب افغان صوبے پکتیکا میں 30نومبر2017کو شائع کی گئی جسے گزشتہ  اتوار کے روز متعارف کرایا گیا۔

اردو زبان میں چھپنے والی کتاب588صفحات پر مشتمل ہے جس میں طالبان رہنماوں کی کئی تصاویر بھی شامل ہیں۔
تفصیلات کے مطابق، کالعدم تنظیم ٹی ٹی پی نے اپنی کتاب میں کہا ہے کہ بلال نامی خودکش حملہ آور اور اس کے ساتھی اکرام اللہ کو بے نظیر کو قتل کرنے کا   ذمہ  دیا گیا،بلال جو کہ سعید کے نام سے جانا جاتا تھا نے 27دسمبر2007کو بے نظیر بھٹوپرقاتلانہ حملہ کیا ، حملہ آور نے ہجوم میں پہنچ کرپہلے بے نظیر بھٹو پر فائرنگ کی جس کی ایک گولی سابق وزیراعظم کو لگی اور پھر بارودی مواد سے بھری جیکٹ کے ذریعے خود کو اڑا لیا،حملے کے بعد اکرام اللہ موقع سے فرار ہوگیا جو تاحال زندہ ہے۔

اکرام اللہ جنوبی وزیرستان کے علاقے مکین ٹاون  کا رہائشی ہے تاہم کتاب میں یہ نہیں بتایا گیا کہ کیا یہ وہی اکرام اللہ ہے جسے انسداد دہشت گردی کی عدالت نے بانی ٹی ٹی پی بیت اللہ محسودسمیت مفرور قرار دیا تھا۔

 یاد رہے کہ بیت اللہ محسود 2009میں جنوبی وزیرستان میں ہونے والے ایک ڈرون حملے میں مارا گیا تھا۔



متعللقہ خبریں