مسلم لیگ نون کا عوامی رابطہ مہم تیز کرنے کا فیصلہ

اجلاس 4 گھنٹے تک جاری رہا جس میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی، اسپیکرقومی اسمبلی سردار ایاز صادق، وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف، وزیر داخلہ احسن اقبال، گورنر پنجاب رفیق رجوانہ ،رانا ثنا اللہ اور دیگر رہنماؤں نے شرکت کی

مسلم لیگ نون کا عوامی رابطہ مہم تیز کرنے کا فیصلہ

سابق وزیراعظم نواز شریف کی زیر قیادت مسلم لیگ (ن) کا اہم اجلاس ہوا جس میں پارٹی کا پارلیمانی بورڈ بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔

نواز شریف کی زیرصدارت لاہور میں ہونے والے پارٹی رہنماوں کے اجلاس میں عوامی رابطہ مہم تیز کرنے کا فیصلہ کیا گیاہے،مرکزی رہنماوں نے اس بات پر بھی اتفاق کیا کہ مائنس نواز شریف کسی صورت قبول نہیں ہوگا

اجلاس 4 گھنٹے تک جاری رہا جس میں وزیراعظم شاہد خاقان عباسی، اسپیکرقومی اسمبلی سردار ایاز صادق، وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف، وزیر داخلہ احسن اقبال، گورنر پنجاب رفیق رجوانہ ،رانا ثنا اللہ اور دیگر رہنماؤں نے شرکت کی۔

ذرائع کے مطابق اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ مسلم لیگ (ن) عام انتخابات میں اپنی کارکردگی کو اجاگر کرے گی۔ 2018 کے انتخابات کے لئے قومی اسمبلی اور سینیٹ کا پارلیمانی بورڈ بنایا جائے گا۔ مسلم لیگ (ن) سندھ میں عوامی رابطوں میں اضافہ اور اپنی جماعت کو مضبوط کرے گی لیکن کراچی میں دو جماعتوں کی سیاست سے دور رہے گی۔ نواز شریف ڈویژن سطح پر رابطوں کا آغاز کریں گے اور ملک بھر میں عوامی اجتماعات سے خطاب کریں گے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق نواز شریف کی زیر صدارت لاہورمیں ہونے والے اجلاس میں (ن) لیگ کے مرکزی رہنماوں کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ پارٹی قیادت کی کردار کشی کی مہم کامیاب نہیں ہونے دینگے،جبکہ پارٹی الیکشن میں تاخیراور دھاندلی کیخلاف بھرپور مزاحمت کرے گی،جبکہ پارٹی کے اکثر رہنماوں نے الیکشن کے بروقت انعقاد پر اتفاق کیا گیا۔
اجلاس میں اس بات کابھی فیصلہ کیا گیا کہ الیکشن سیل قائم کرکے انتخابات کی بھرپور تیاری کی جائیگی۔
اس موقع پر شہباز شریف کاکہناتھا کہ محاذ آرائی سے کچھ حاصل نہیں ہوگا صرف نقصان ہوگا۔

 



متعللقہ خبریں