ونیزویلا میں ایک نازک دور میں فوجی مشقیں

مشقوں میں فوج کی آپریشنل تیاری سمیت  ملیشیاؤں قوتوں کے ہمراہ  کسی ممکنہ کاروائی کی استعداد اور صلاحیت  کو جانچنے کی کوشش کی جائیگی

maduro tatbikat2.jpg
maduro tatbikat1.jpg

ونیزویلا کی فوج نے متحدہ امریکہ اور گرد و نواح کے ممالک کے ساتھ تناؤ پیدا ہونے والے ان ایام میں 5 روز تک جاری رہنے والی فوجی مشقوں کا آغاز کیا ہے۔

یہ مشقیں لاطینی امریکہ میں  تحریک ِہسپانوی  انتظامیہ  سے آزادی کا حصول کے لیڈر  سیمون بولیوار  کے آنگوستورا  خطاب کی 200 ویں سالانہ یاد کے موقع  پر ہو رہی ہیں۔

ان مشقوں  کے حوالے سے ریاست میراندا میں واقع  فوجی اڈے پر منعقدہ تقریب میں صدر نکولس مادورو  اور وزیر دفاع ولا دیمر پیڈرینو لوپیز سمیت ملکی فضاءیہ کے کمانڈروں نے بھی شرکت کی۔

اس موقع پر فوجیوں سے خطاب کرنے والے مادورو نے  سیمون  بولیوار  نے اپنی  مذکورہ تقریر میں جدوجہدِآزادی کے بنیادی اصولوں  تعین کرنے پر توجہ مبذول کراتے ہوئے کہا کہ "مسلح افواج یہاں پر 2 صدیوں سے اپنے مستقبل کی خاطر جنگ کرنے  والے  ایک وطن کے وقار و ناموس کا تحفظ کرنے والے جوان یہاں پر ہیں۔ ہمیں ڈونلڈ ٹرمپ  کو سخت جواب دینا ہو گا  اور ان کی دھمکیوں کو بھی ۔

امریکی فوجی مداخلت کی دھمکیوں میں اضافہ ہونے والے ان ایام میں شروع ہونے والی ان  مشقوں میں فوج کی آپریشنل تیاری سمیت  ملیشیاؤں قوتوں کے ہمراہ  کسی ممکنہ کاروائی کی استعداد اور صلاحیت  کو جانچنے کی کوشش کی جائیگی۔

 

 

 



متعللقہ خبریں