نوبل ادب ایوارڈ جاپانی نژاد برطانوی ناول نگار کازوؤ ایشی گُورو کے نام

نوبل انعام برائے ادب کے لیے اس بار جاپانی مصنف ہاروکی موراکامی اور کینیا کے نگوگی وا تھیونگو کا نام بھی لیا جا رہا تھا

نوبل ادب  ایوارڈ جاپانی نژاد برطانوی ناول نگار کازوؤ ایشی گُورو کے نام

سال رواں کا ادب کا نوبل انعام جاپانی نژاد برطانوی ناول نگار کازوؤ ایشی گُورو کو دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ایشی گُورو جاپان میں پیدا ہوئے تھے۔ اس وقت ان کی عمر باسٹھ برس ہے اور ان کا مشہور ترین ناول The Remains of the Day یا ’دن کی باقیات‘ ہے۔

 سویڈن کے دارالحکومت میں نوبل کمیٹی کے جمعرات کے روز کیے گئے اعلان کے مطابق اس برطانوی ادیب کے اب تک شائع ہونے والے آٹھ ناول ایک ایسی جذباتی قوت کا نتیجہ ہیں، جو انسانوں کے ان کے ارد گرد کی دنیا سے ظاہری رابطوں کے پیچھے موجود خالی پن کو تلاش کر لیتی ہے۔

رواں برس کا نوبل انعام برائے ادب جاپانی نژاد برطانوی ناول نگار کازواو اِشیگورو کو دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔ اشیگورو کے سب سے معروف ناول ’’دا ریمینز آف دا ڈے‘‘ اور ’’نیور لیٹ می گو‘‘ ہیں۔

 نوبل انعام برائے ادب کے لیے اس بار جاپانی مصنف ہاروکی موراکامی اور کینیا کے نگوگی وا تھیونگو کا نام بھی لیا جا رہا تھا۔ موراکامی حقیق اور مجازی دنیاؤں کو ملانے والے زبردست کہانی کار ہے، جب کہ نگوگی وا تھیونگو کو ان کے سیاسی نوعیت کے ادبی کام کی بنا پر اس انعام کے لیے فیورٹ قرار دیا جا رہا ہے۔ واتھیونگو کو اسی صورت حال میں کینیا سے امریکا ہجرت کرنا پڑی تھی۔

جمعرات کے روز  اس انعام کے ساتھ گیارہ لاکھ ڈالر کی رقم بھی کازواو  اِشیگورو کو دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔

ان کے مشہور ناولوں 'دا ریمینز آف دا ڈے' اور 'نیور لیٹ می گو' پر فلمیں بنائی گئی ہیں، جن کو خاصی پزیرائی ملی۔ انھیں 1995 میں او بی ای سے بھی نوازا گیا تھا۔

62 سالہ مصنف کا کہنا ہے کہ ایوارڈ ان کے لیے بے تحاشا خوشی کا باعث ہے۔



متعللقہ خبریں