ٹرمپ اور کم جونگ کی دو طرفہ دھمکیاں کم سن بچوں کے جھگڑے کی مانند ہیں، روس

روسی وزیر خارجہ نے امریکہ میں پریس بریفنگ میں شام اور شمالی کوریا کے بحران کے حوالے سے اہم اعلانات کیے

ٹرمپ اور کم جونگ کی دو طرفہ دھمکیاں کم سن بچوں کے جھگڑے کی مانند ہیں، روس

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف  کا کہنا ہے کہ شام کے بٹوارے کی ہر گز اجازت نہیں دی جائیگی۔

روسی وزیر  نے اقوام متحدہ کی  جنرل اسمبلی کے اجلاس میں مذاکرات  کے دائرہ عمل میں اقوام متحدہ کے مرکزی دفتر میں منعقدہ  پریس کانفرس میں بتایا  کہ شام میں روس کی ترجیح  دہشت گردی کا خاتمہ ہے، اس  مقصد کے تحت امریکہ اور روس کو  مؤثر تعاون  قائم   کرنا ہو گا۔

لاوروف نے  شام کی تقسیم کے حوالے سے خدشات کے  بارے میں   ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ"ہم شام  کی  تقسیم کی  ہر گزاجازت نہیں    دیں گے،  چونکہ یہ عمل  پورے مشرق وسطی کو متاثر کرے گا۔ "

انہوں نے  امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ  کے سلامتی کونسل   سے خطاب  میں" ہم شمالی کوریا کو مکمل طور پر ختم کر دیں گے"   بیانات  کے بعد دونوں ملکوں کے بیچ تناؤ  میں اضافے سے  متعلق ایک سوال کے جواب  میں بتایا کہ"دو طرفہ   جاری  دھمکیاں اور  جزیرہ     نما کوریا  میں  جنگ   چھیڑا جانا نا قابل قبول ہے، ہمیں اپنے غصے پر قابو پانا ہو گا۔"

انہوں نے ٹرمپ اور کم جونگ   کی دو طرفہ دھمکیوں کو  "پری اسکول  کے بچوں کے جھگڑے" سے تشبیہ  دی ہے۔

لاوروف نے مزید کہا کہ  بعض  غیر جانبدار یورپی ملک  شمالی کوریا بحران   میں ثالثی کا کردار سنبھال سکتے ہیں، جس کا ہم خیر مقدم کریں گے۔

 

 



متعللقہ خبریں